Code : 3902 7 Hit

شامی شہریوں کا امریکہ کے خلاف عوامی اجتماع

شام کے شہرقامشلی کے رہائشیوں نے امریکی پابندیوں اور سزار کے نام سے جانا جانے والے قانون کے خلاف نعرے لگاتے ہوئے شہر میں ریلی نکالی اور امریکی فوج کے شام کی سرزمین سے انخلا کا مطالبہ کیا۔

ولایت پورٹل:شامی سرکاری نیوز ایجنسی سانا کی رپورٹ کے مطابق  شمالی شام کے شہر قامشلی کے رہائشیوں نے امریکی پابندیوں اور سزار کے نام سے جانے جانے قانون کے خلاف نعرے لگاتے ہوئے شامی سرزمین سے ترکی اور امریکی فوجیوں کے انخلا کا مطالبہ کیا، مظاہرے میں شامی فوج، شام کو دہشت گردوں سے نجات دلانے اور قابضین کو ملک بدر کرنے کی کوششوں کی حمایت کی گئی  اور شام کے خلاف جنگ سے پیدا ہونے والی تباہی کو از سر نو تعمیر کرنے کی ضرورت پر زور دیا گیا۔
امریکہ مخالف ریلی میں شریک فراس فرح نے کہا کہ ہم چاہتے ہیں کہ ترکی اور امریکی قابض شام سے چلے جائیں،قامشلی کے ایک اور رہائشی  واثق العاکوب نے کہاکہ میں نے شام کی سرزمین پر امریکی اور ترکی کی قابض فوج کی موجودگی کے خلاف اپنی مخالفت کے اظہار کے لئے اس احتجاجی ریلی میں حصہ لیا ہے، امریکہ مخالف ریلی میں شامل ایک اور شریک جاسم شتیوی نے کہا ہے کہ امریکی اور ترکی کے قبضہ کاروں کو شام کی سرزمین چھوڑ دینا چاہئے۔
قامشلی قمیشلی کے ایک ثقافتی مرکز کی سربراہ  فائزہ القادری نے کہا کہ سزار کا قانون ظالمانہ ہے اور انہیں ہمیں زندگی سے محروم رکھنے کا کوئی حق نہیں ہے،ہم اپنے ملک سے امریکی اور ترک فوجوں کے انخلا کا مطالبہ کرتے ہیں۔
واضح رہے کہ امریکہ نے شامی حکومت کی مرضی کے بغیر داعش  خلاف نام نہاد اتحاد بنا کر اس ملک پر قبضہ کررکھا ہے جہاں وہ  اوراس کے اتحادی داعش کے خلاف اقدام کرتے نہیں کرتے بلکہ اس دہشتگرد اور بدنام زمانہ تنظیم کو اسلحہ سے لے کر کھانے پینے کی اشیا تک تمام تر سہولیات مہا کرتے ہیں جس کا داعشی دہشتگرد خود اعتراف کرتے ہیں۔


0
شیئر کیجئے:
ہمیں فالو کریں
تازہ ترین