Code : 4005 5 Hit

نیتن یاہو کے خلاف جاری مظاہرے خونریزی میں تبدیل ہوسکتے ہیں :صہیونی وزیر

اسرائیلی وزیر پبلک سکیورٹی نے متنبہ کیا ہے کہ صیہونی وزیر اعظم کے خلاف ہونے والےمظاہروں میں خون خرابہ ہونے کا امکان ہے۔

ولایت پورٹل:میڈل ایسٹ مانیٹر ویب سائٹ کی رپورٹ کے مطابق اسرائیلی وزیر عوامی تحفظ امیر اوهانانے خبردار کیا ہے کہ مقبوضہ علاقوں میں حالیہ حکومت مخالف مظاہروں سے خونریزی ہوسکتی ہے، اوہنا نے اسرائیلی وزیر اعظم بنیامین نیتن یاہو کے خلاف وسیع پیمانے پر ہونے والے مظاہروں کے بارے میں کہا کہ ایسا محسوس ہوتا ہے کہ مظاہرے خونریزی میں ختم ہوں گے، اسرائیلی وزیر پبلک سکیورٹی نے یہ کہتے ہوئے کہ یہ احتجاج نیتن یاہو کے خلاف بغاوت کی لہر کا حصہ ہیں ، کہا کہ میں واقعی اس نفرت انگیز ماحول سے پریشان ہوں۔
یادرہے کہ ہفتے کی شام مقبوضہ بیت المقدس کے ہزار وں باشندے نیتن یاھو کی رہائش گاہ کے آس پاس جمع ہوئے اور پھر قریبی گلیوں میں مارچ کیااور ان کے استعفیٰ کا مطالبہ کیا،جمعرات کے روز بھی  صیہونی پولیس نے نیتن یاھو کی رہائش گاہ کے آس پاس جمع  ہونے والےاور ان کے استعفی کا مطالبہ کرنے والے 55 مظاہرین کوہراست میں لیا،واضح رہے کہ حالیہ ہفتوں میں متعدد بار تل ابیب اور مقبوضہ بیت المقدس سمیت مقبوضہ فلسطین کے متعدد شہروں کے رہائشیوں نے مغربی کنارے پر 30 فیصد قبضے کے منصوبے سمیت ،کورونا وائرس سے لڑنے کے بہانے سکیورٹی فورسز میں اضافہ  پر مبنی نیتن یاہو کی مختلف پالیسیوں کے خلاف مظاہرے کیے ہیں  اور ان کے بدعنوانی کے معاملات پر بھی رد عمل کا اظہار کیا ہے۔
درایں اثنا صہیونی پولیس نے اپنے وزیر اعظم کے خلاف حکومت اور مالی بدعنوانی کے تین مقدمات درج کیے ہیں اور گذشتہ تین سالوں میں کابینہ کے سابق معاونین اور وزراء سمیت مختلف ذرائع سے پوچھ گچھ کی ہے جس سے ظاہر ہوتا ہے کہ اسرائیل دن بدن اپنی نابودی کی طرف بڑھتا چلا جارہا ہے ۔


0
شیئر کیجئے:
ہمیں فالو کریں
تازہ ترین