بحرینی حاندانی آمریت کی جیل میں سیاسی قیدی تڑپ تڑپ کرشہید

بحرینی خاندانی آمریت آل خلیفہ کی  سنٹرل جیل کےایک سیاسی قیدی کی تڑپ تڑپ کو موت ہوگئی پر جیل عملہ اس کو اسپتال لے جانے سے انکاری رہا۔

ولایت پورٹل:بحرین کے  ذرائع ابلاغ نے اس ملک کی سنٹرل جیل میں ایک سیاسی قیدی عباس مال اللہ کی شہادت کی اطلاع دی درایں اثنا  شہید کے اہل خانہ اور قانونی تنظیموں نے گولی لگنے سے ہونے والے زخموں کی وجہ سے ان کی تشویشناک حالت پر تشویش کا اظہار کیا اور اس بات پر زور دیا کہ انہیں طبی امداد کی اشد ضرورت ہے، دوسری طرف ، بہت سے سیاسی تنظیموں اور دھڑوں نے اس خبر پر ردعمل کا اظہار کرتے ہوئے کہا کہ اس بحرینی شہری کی شہادت طبی خدمات کی عدم دستیابی اور اس کے ساتھ بد سلوکی کی وجہ سے ہوئی ۔
 یادرہے کہ بحرین کی سینٹرل جیل میں حکام کی جانب سے طبی امداد فراہم کرنے سے انکار کرنے کے بعد  نویدرت قصبے سے تعلق رکھنے والے عباس مال اللہ کو شہید کردیا گیا،یادرہے کہ  انہیں مئی 2011 میں دوران گولی لگنے سے زخمی ہونے کی وجہ سے خصوصی طبی اور صحت کی خدمات کی ضرورت تھی،بحرین کے ذرائع کا کہنا ہے کہ عباس ما اللہ اپنے دل کی طرف اشارہ کرتے ہوئے اور سانس لینے یا بولنے سے قاصر رہتے ہوئے جیل میں شہید ہوگئے جبکہ ان کے ساتھی جیل کے دروازوں پر دستک دیتے رہے اور انھیں بچانے کے لئے ابتدائی طبی امداد کا مطالبہ کرتے رہے  لیکن جیل کے افسران نے یہ دعوی کرتے ہوئے کہ انھیں کسی اعلی عہدے دار کا کوئی حکم نہیں ملا ،انھیں اسپتال لے جانے کرنے سے انکار کردیا اور طبی امداد بھی فراہم نہیں کی گئی جس کی وجہ سےلمحہ بہ لمحہ ان کی حالت خراب ہوتی گئی جبکہ دیگر قیدی چیخ چیخ کر پکار رہے تھے کہ انھیں بچایا جائے۔
واضح رہے کہ عباس کے ساتھی قیدیوں کی بار بار کی جانے والی ان درخواستوں کے نتیجے میں بعد میں انھیں اسپتال لے جانے کے بجائے جیل کے طبی معائنے والے کمرے میں منتقل کردیا گیالیکن ان کی جسمانی حالت کی وجہ سے شہید ہوگئے۔


0
شیئر کیجئے:
ہمیں فالو کریں
تازہ ترین