صیہونیوں کے ہاتھوں قتل ہونے والے فلسطینی بچے

تاریخ گواہی دے گی کہ صیہونی غاصب حکومت مغربی ممالک کی حمایت سے اور دنیا کی خاموشی کے سائے میں اس کا واحد خاص کام بچوں کا قتل رہا ہے اور رہے گا، تاہم یہ فلسطینی بچوں کا پاک خون ہے جو کئی دہائیوں بعد القدس کے پرچم کو سربلند رکھے ہوئے ہے۔

ولایت پورٹل:حالیہ دنوں میں ایران کے دشمنوں نے وسیع پروپیگنڈہ اور میڈیا وار شروع کیا ہے کہ اسلامی جمہوریہ ایران معصوم بچوں کو قتل کر رہا ہے جبکہ یہ ایک ایسا الزام ہے جس کی صیہونی غاصب حکومت سمیت تمام سفاک مغربی حکومتوں اور ان کے اتحادی زیادہ مستحق ہیں۔
 غاصب صیہونی حکومت کی تاریخ گواہ ہے کہ اس قابض حکومت نے فلسطین پر کئی دہائیوں کے زمینی تسلط کے دوران بچوں کو قتل کرنے کے علاوہ کوئی خاص کام نہیں کیا،غاصب صیہونی حکومت کی جانب سے بچوں کا قتل عام غزہ، مغربی کنارے اور بیت المقدس میں قبضے کے آغاز میں شروع ہوا تھا جو اب مزید گھناؤنے طریقوں سے جاری ہے۔
 تازہ ترین اطلاعات کے مطابق رواں سال کے آغاز میں قابض فوج کے حملوں کے نتیجے میں 66 بچے شہید ہوئے، جب کہ میڈیا کے حلقے اور انسانی حقوق کی تنظیمیں قبضے کے سالوں میں اسرائیلی غاصبوں کے ہاتھوں 2500 بچوں کی شہادت کی خبریں دیتی ہیں۔
قابل ذکر ہے کہ قابضین کی انتہا پسندی اور دہشت گردی میں اضافہ، اقوام متحدہ اور دیگر بین الاقوامی قانونی اداروں کی غیر انسانی خاموشی اور مغربی ممالک کی حمایت نے بے گناہ فلسطینی بچوں کے خلاف صیہونی فوج کے جرائم کے تسلسل کی ایک مذموم تکون کو جنم دیا ہے۔

0
شیئر کیجئے:
ہمیں فالو کریں
تازہ ترین