Code : 2243 104 Hit

اب ہم نہیں کہتے بشار اسد کو ہٹا دیا جائے:ترکی

ترکی کے ایک سفارتکار نے میں امریکی ویب سائیٹ کو دیئے جانے والے انٹرویو میں کہا ہے کہ آنقرہ اب شام کے صدر بشار اسد کو ہٹانے کا مطالبہ نہیں کررہا ہے۔

ولایت  پورٹل:ترکی کی وزارت خارجہ کے ایک اعلی عہدیدار نے اپنے ایک انٹرویو کے دوران کہا ہے کہ تہران اور انقرہ کے درمیان روابط کا بہترین موضوع یہ ہے کہ  شام میں کس طرح دونوں ممالک ایک متقفہ نظریہ  تک پہنچ سکتے ہیں، ترکی کے اعلی سفارتکار نے امریکی ویب سائٹ المانیٹر کو دیے ج جانے والے انٹرویو میں کہا ہےکہ ترکی اب بشار اسد کو صدارت کی کرسی سے ہٹانا نہیں چاہتا،البتہ تہران شمالی شام میں ہموجودگی کی موجودگی پر زیادہ  خوش نہیں ہے لیکن روس اجازت دے  تو ایران یقینا  دمشق  اور انقرہ کے درمیان ثالثی کا کردار ادا کرسکتا ہے ،وزارت خارجہ کےعہدہ دار نے مزید کہا کہ ترکی اور شام کے درمیان ایران کی ثالثی اس بات پر مبنی ہے کہ تہران دہشت گرد گروہ پی کے کے جیسے موضوع پر کس حد تک  ہمارے ساتھ تعاون کرتا ہے،دوسری طرف سے ترکی  اس وقت شمالی شام میں امن  علاقے کے قیام کے لیے بے انتہا کوششوں میں مصروف ہے اور کرد  مسلح افراد کو اپنی سرحد سے دور کر رہا ،البتہ ترکی  نے یہ اعلان کیا ہے کہ وہ ان علاقوں میں شام کے مہاجرین کو بسائے گا گا،قابل ذکر ہے کہ ترکی کے صدر صدر راجب طیب اردگان نے بھی   آج اپنی تقریر کے دوران  کہا ہے کہ  ہم چاہتے ہیں بیس لاکھ شامی پناہ گزینوں کو ترکی سے متصل  شمالی شام کی سرحد پر بسائیں  لیکن شام کے اندر یہ کام ہوگا۔


0
شیئر کیجئے:
फॉलो अस
नवीनतम