شام اور عراق کے خلاف امریکہ کی نئی چال

لبنان کے ایک سیاسی تجزیہ کار نے  امریکی افواج کے ذریعے داعش کو دوبارہ متحرک کرنے کے امریکی منصوبے کی بابت انتباہ دیاہے۔

ولایت پورٹل:العہد نیوز چینل کی رپورٹ کے مطابق  لبنانی سیاسی تجزیہ کار ہادی قبیسی نے اس بات پر زور دیا کہ عراقیوں کو داعش دہشت گردوں کا بھیس بدل کر ختم کرنا نئی امریکی سازش ہے، انہوں نے کہا کہ واشنگٹن عراق اور شام میں فرقہ وارانہ کشیدگی کو دوبارہ زندہ کرنے کی کوشش کر رہا ہے، قبیسی نے کہا کہ تمام ثبوت اس بات کی چرف اشارہ کرتے ہیں کہ امریکی ا ن ممالک کی صورتحال کو مزیدخراب کرناچاہتے ہیں اور اس مقصد کے ساتھ خطے میں نئے اقدامات اٹھائے جارہے ہیں۔
یادرہے کہ انھوں نے کچھ دن پہلے بھی کہا تھا کہ  امریکہ ان ممالک کے سلامتی استحکام کو تباہ کرنے کے مقصد سے عراق اور شام میں تباہ کن کردار ادا کرنے کی کوشش کر رہا ہے،قبیسی نے مزید کہا کہ امریکہ اپنے داعش اور اور نام نہاد جوکر عناصر کے ذریعے عراق اور شام میں ایک نئی تباہ کن جنگ شروع کرنے کی کوشش کر رہا ہے،واضح رہے کہ اس سے قبل  ایک سکیورٹی ذرائع نے بتایا تھا کہ شمالی صوبے صلاح الدین میں عراقی عوامی تنظیم الحشد الشعبی فورسز کی 22 ویں بریگیڈ پر دہشت گرد حملہ امریکی فوجیوں کی مدد سے کیا گیا تھا،یادرہے کہ امریکہ ان ممالک میں داعش کو ختم کرنےکے بہانے آیا تھا  لیکن جیسا کہ شواہد سے معلوم ہوتا ہے کہ وہ اس دہشت گرد گروہ کے لیے سہولت کار کا کام کر رہا ہے اور انھیں مزید مضبوط کرنے کے کام کررہاہے  یہی وجہ ہے کہ اس عراق کی عوام تنظیم الحشد الشعبی ہو یا شام کی عوامی فورسزایک آنکھ بھی نہیں بھاتی ہیں کیونکہ وہ اس کی راہ میں رکاوٹ ہیں اور اسے اپنے ناپاک عزائم میں کامیاب نہیں ہونے دے رہی ہیں۔




0
شیئر کیجئے:
ہمیں فالو کریں
تازہ ترین