آل سعود کی جارحیت کا شکار یمنی بچوں کی تعداد 8 ہزار سے زائد

انسانی حقوق کی تنظیم نے اعلان کیا ہے کہ یمن کے خلاف جارح سعودی اتحاد کے حملوں میں شہید ہونے والے بچوں کی تعداد 8 ہزار سے زائد ہو گئی ہے۔

ولایت پورٹل:المیادین چینل کی رپورٹ کے مطابق یمنی خواتین اور بچوں کے حقوق کے حوالے سے سرگرم انسانی حقوق کی تنظیم "انتصاف" نے امریکہ کی قیادت میں جارح سعودی اماراتی اتحاد کے جرائم پر ایک نئی رپورٹ شائع کی ہے جس کے مطابق 8 ہزار سے زائد  یمنی بچے اس اتحاد کے حملوں کا نشانہ بن چکے ہیں۔
 مذکورہ ادارے نے اعلان کیا کہ یمن میں اس جارحیت کے آغاز سے لے کر اب تک آٹھ ہزار 116 بچے ہلاک اور زخمی ہوچکے ہیں جبکہ کہ اس اتحاد کے حملوں کے نتیجے میں چھ ہزار عام شہری معذور ہوچکے ہیں جن میں سے 5 ہزار559 بچے ہیں۔
مذکورہ تنظیم نے مزید کہا کہ ایک ملین 400 ہزار یمنی بچے اپنے بنیادی ترین حقوق سے محروم ہیں  جبکہ پانچ سال سے کم عمر کے 20 لاکھ 300 ہزار سے زیادہ بچے غذائی قلت کا شکار ہیں، انتصاف نے کہا کہ بین الاقوامی سطح پر ممنوعہ ہتھیاروں کے استعمال کی وجہ سے روزانہ 80 سے زائد یمنی بچے مر جاتے ہیں نیز یہ مسئلہ قبل از وقت پیدا ہونے والے بچوں کی تعداد میں اضافے کی ایک وجہ ہے، اس طرح کہ ہر سال 39% یمنی بچے قبل از وقت پیدا ہوتے ہیں۔
مذکورہ ادارے نے اس بات پر زور دیتے ہوئے کہ سعودی اتحاد یمن میں خواتین اور بچوں کے خلاف تمام جرائم کا ذمہ دار ہے، انسانی حقوق کے دعویدار بین الاقوامی اداروں سے اس میدان میں اپنی ذمہ داری پوری کرنے کا مطالبہ کیا۔

0
شیئر کیجئے:
ہمیں فالو کریں
تازہ ترین