Code : 3748 3 Hit

لاکھوں یمنی بچے غذئی قلت کی وجہ سے مرنے والے ہیں:یونیسیف

یونیسف نے ایک رپورٹ میں کہا ہے کہ انسانی امداد کی کمی کی وجہ سے غذائیت کا شکار یمنی بچوں کی تعداد میں دن بدن اضافہ ہوتا چلا جارہا ہے۔

ولایت پورٹل:روئٹرز خبر رساں ادارے  کی رپورٹ کے مطابق اقوام متحدہ کے بچوں کے فنڈ (یونیسیف) نے ایک رپورٹ میں کہا ہے کہ انسانی امداد کی شدید قلت کے سبب اس سال کے آخر تک غذائیت کی کمی سے متاثرہ بچوں کی تعداد 2.4 ملین تک پہنچنے کا امکان ہے۔
رپورٹ میں انتباہ دیا گیا ہے کہ غذائی قلت کا شکار پانچ سال سے کم عمر کے بچوں کی تعداد میں 20 فیصد اضافہ ہونے کا امکان ہے۔
یمن میں یونیسف کی نمائندہ سارہ بیسلو نے کہا کہ اگر ہمیں فوری مدد نہ ملی تو یہ بچے بھوک سے مر جائیں گے۔
رپورٹ کے مطابق بیسولو نے مزید کہا کہ یونیسف نے بار بار کہا ہے کہ یمن دنیا میں بچوں کے لئے بدترین جگہ ہے اور اس صورتحال میں کوئی بہتری نہیں آرہی ہے۔
یونیسیف کاکہنا ہے کہ  اس وقت تقریبا 7. 7.8 ملین بچے تعلیم سے محروم ہیں جنہیں بے روزگاری کا خطرہ ہے اور وہ مسلح گروہوں اور کم عمری کی شادی کی طرف راغب ہیں۔
واضح رہے کہ یمن کے خلاف سعودی اتحاد کی جارحیت اب اپنے چھٹے سال میں داخل ہوچکی ہے  اس وقت کے دوران اس اتحاد کی کارروائیوں میں دسیوں ہزار افراد ہلاک ہوئے ہیں  جن میں زیادہ تر عام شہری ہیں، اس کے علاوہ  یمن کی جنگ نے ملک کو بدترین انسانی بحران کا شکار بنا دیا ہے ۔

0
شیئر کیجئے:
ہمیں فالو کریں
تازہ ترین