0 Hit

ایرانی سائنسدانوں کو قتل کرکے اس ملک کو ایٹمی طاقت بننے سے روکا نہیں جا سکتا؛یورپی یونین کا اعتراف

یوروپی یونین کی خارجہ پالیسی کے سربراہ نے ایران کے ممتاز ایٹمی سائنسدان ڈاکٹر محسن فخری زادہ کے قتل پر تنقید کرتے ہوئے کہا کہ یہ ایک مجرمانہ فعل ہے۔

ولایت پورٹل:ایرنا کی رپورٹ کے مطابق یوروپی یونین کی خارجہ پالیسی کے سربراہ جوزف بورریل نے منگل کے روز یہ معاملہ گذشتہ دہائی کے دوران یورپی یونین کی خارجہ پالیسی کی صورتحال پر منعقد ہونے والی ایک گول میز کانفرانس میں ایران کے ممتاز ایٹمی سائنسدان ڈاکٹر محسن فخری زادہ کے قتل  کا معاملہ اٹھایا ، انہوں نے مزید کہاکہ بدقسمتی سے ، یہ مسئلہ حل کرنے کا طریقہ نہیں ہے، ہم ایران کے جوہری سائنسدانوں کو ہلاک کرکے اس ملک کو جوہری طاقت بننے سے نہیں روک سکتے، انہوں نے اس المناک نقصان کے مرتکبین کا براہ راست ذکر نہ کرتے ہوئے کہا کہ  کچھ لوگ نہیں چاہتے کہ ایران کے ساتھ ہونے والا ایٹمی معاہدہ برقرار رہے جبکہ اس معاہدے سے امریکہ کے نکل جانے کے باوجود ہم نے اس کو زندہ رکھنے کی کوشش کی ہے۔
یادرہے کہ ایران کے ایک ممتاز ایٹمی سائنسدان شہید فخری زادہ جمعہ کی شام صوبہ تہران کے آبسرد علاقے میں دہشت گردوں کے ایک حملے میں شہید ہوگئے تھےجس کے بعد یوروپی یونین کی فارن ایکشن سروس کے ترجمان نے ہفتے کے روز ایک بیان جاری کرتے ہوئے اس اقدام کو مجرمانہ اور انسانی حقوق کے احترام کے یورپی یونین کے اصولوں کے منافی قرار دیا تھا، بیان میں کہا گیا ہے کہ اس پرآشوب وقت میںتمام فریقوں کے لئے پہلے سے کہیں زیادہ اہم بات ہے کہ وہ اس صورتحال کے مزید بڑھنے سے بچنے کے لئے پرسکون اور متحمل رہیں ، جو کسی کے فائدے میں نہیں ہے۔


0
شیئر کیجئے:
ہمیں فالو کریں
تازہ ترین