عراقی سکیورٹی فورسز کے ہاتھوں داعش کے 3 اہم دہشتگرد گرفتار

عراقی انٹیلی جنس فورسز نے کرکوک اور دیالی صوبوں میں داعش کے دہشت گرد گروہ کے تین نامور ممبروں کو گرفتار کرنے میں کامیابی حاصل کی۔

ولایت پورٹل:شفق نیوز  ویب سائٹ کی رپورٹ کے مطابق عراقی وزارت داخلہ کی انٹلیجنس سروس نے آج داعش دہشت گرد گروہ کے تین نامور ممبروں کی گرفتاری کا اعلان کیا، سروس نے ایک بیان میں کہا ہے کہ دہشت گردی کے قانون کے آرٹیکل 4 کے تحت داعش کے تین اہم دہشت گردوں کو کرکوک اور دیالی صوبوں میں گرفتار کیا گیا ہے۔
 رپورٹ کے مطابق اس بیان میں آیا ہے کہ پہلا دہشت گرد جو طارق کے نام سے مشہور تھا وہ انٹلیجنس کارکن تھا اور ساتھ ہی داعش کے دیوان الحسبہ کا بھی رکن تھا، دوسرا دہشت گرد  جس کا نام سعد ہے ، وہ مرکز میں "دیوان الجند" کہلاتا تھا اور وہ داعشی عناصر کو امداد فراہم کرنے کا ذمہ دار تھا، اس نے اعتراف کیا کہ اس نے 2014 میں "غزوہ" کے نام سے داعش کی تین بڑی کارروائیوں میں حصہ لیا تھا، یہ آپریشن عراقی سکیورٹی فورسز کے خلاف کیے گئے تھے، تیسرا دہشت گرد  جس کا نام حسام ہے ،یہ اسلامی پولیس" نامی گروہ  میں موجود تھا، اس نے اعتراف کیا ہے کہ اس نے کرکوک کے علاقے الزباب میں بھی دہشت گردی کی وارداتیں کی ہیں، عراقی سکیورٹی فورسز نے یہ بھی اطلاع دی ہے کہ انہوں نے انتہائی اہم معلومات حاصل کرنے بعد اور صلاح الدین صوبے کی  سکیورٹی فورسز کے ساتھ ہم آہنگی کے بعد ایک اور دہشت گرد کو گرفتار کیا ہےجس پر مشرقی عراق میں صوبہ دیالی میں اس گروپ کے دیگر ممبروں کو خوراک اور رسد کی فراہمی کی ذمہ داری داعش کے اس کارکن کی تھی،تینوں دہشتگرد ابھی تک سکیورٹی فورس کی حراست میں ہیں جہاں سے انھیں متعقلہ  حکام کے حوالہ کیا جائے گا۔


0
شیئر کیجئے:
ہمیں فالو کریں
تازہ ترین