Code : 2244 122 Hit

عراق میں ہونے والے حالیہ مظاہروں کے سلسلے میں عراقی وزیراعظم کا ردعمل

عراقی وزیر اعظم نے ایک بیانیہ جاری کرتے ہوئے تاکید کی ہے کہ جہاں آئین کےاندر رہتے ہوئے اعتراض کرنا عوام کا حق ہے وہیں عمومی نظم و ضبط کو برقرار رکھنا اور عوامی اموال کو نقصان پہنچنے سے بچانا بھی ضروری ہے۔

ولایت پورٹل:اب سے کچھ دیر پہلے عراق کے  وزیراعظم عادل عبدالمہدی  کی طرف سے ایک بیانیہ جاری ہوا ہے  جس میں کل بغداد بصرہ اور دیگر شہروں میں ہونے والے احتجای مظاہروں کے سلسلہ میں رد عمل کا اظہار کیا گیا ہے ،عراقی وزیراعظم نے بیانیہ میں کہاہے کہ عوام مطمئن رہے حکومت آپ کے جائز مطالبات کو پورا کرنے کی ہر ممکن کوشش کرے گی، انہوں نے کہا کہ میری نظر میں میں عراقی آئین کے اندر رہتے ہوئے اپنے جائز مطالبات کے لیےمظاہرے کرنا عوام کا حق ہے اور میں مظاہرین اور عراقی سلامتی دستوں سے منسلک افراد کے درمیان کوئی فرق نہیں سمجھتا ہوں۔ انہوں نے اپنے بیان میں مزید کہا کہ نظم عامہ میں خلل ڈالنا نا یا مظاہرین یاحفاظتی اہلکاروں  میں سے کسی کے ساتھ بھی بد سلوکی کرنا اور انھیں مارنا قانون کے مطابق جرم ہے ، عراقی وزیراعظم نے مظاہرین میں سے چند افراد کے مارے جانے اور سلامتی اہلکاروں  کے زخمی ہونے پر افسوس کا اظہار کرتے ہوئے کہا ہے کہ اس سلسلے میں تحقیقات کا حکم دے دیا گیا ہے ، آخرمیں انھوں  نے مظاہروں کے دوران زخمی ہونے والے افراد کے لئے بہتر بہتر سے بہتر طبی امداد فراہم کرنے کا حکم دیا اور ہلاک ہونے والوں کے اہل خانہ کے ساتھ اظہار ہمدردی کرتے ہوئے انہیں تسلیت پیش کی، یاد رہے کہ بغداد بصرہ اور جنوبی عراق کے دوسرے شہروں میں کل عوامی سطح پربیکاری اور معیشتی مشکلات کے خلاف مظاہرے ہوئے جن میں دو لوگ لوگ ہلاک اور کئی زخمی ہوگئے، ابھی تک کسی بھی گروہ نے میں اعتراضات کی کال دینے کی ذمہ داری قبول نہیں کی ہےبلکہ صدرتحریک جو عام طور پر اس طرح کے مظہرات  میں آگے آگے رہتی ہے  انہوں نے بھی اعلان کیا ہے کہ وہ اس میں شریک نہیں ہوں گے۔


0
شیئر کیجئے:
फॉलो अस
नवीनतम