Code : 4382 4 Hit

ایرانی میزائل امریکی فوج کو دن میں تارے دکھاسکتے ہیں:امریکی نشریہ

ایک امریکی نشریے نے ایران کی میزائل طاقت کا ذکر کرتے ہوئے لکھا ہےکہ ایران کے میزائل امریکی فوج کو نیست ونابود کرسکتے ہیں اور ہوسکتا ہے کہ ایک دن وہ واشنگٹن پر آگریں۔

ولایت پورٹل:امریکی جریدے نیشنل انٹرسٹ نے اپنی ایک رپورٹ میں ایران کی میزائل طاقت اور یہ کہ اس میں مغربی ایشین خطے میں سب سے بڑی میزائل فورس موجود ہے نیز وہ  اب بھی وہ اپنی میزائل ٹکنالوجی کو ترقی دے رہا ہے اور اسے اپ ڈیٹ کر رہا ہے،کا ذکر کرتے ہوئے لکھا کہ ایران کے میزائلوں میں اتنی طاقت ہے کہ وہ امریکی فوج کو نیست ونابود کردیں  اور ہوسکتا ہے کہ ایک دن وہ واشنگٹن پر آگریں ۔
اس رپورٹ کا آغاز کا اس سوال سے ہوتا ہے کہ ایران کے پاس فی الحال ایک بین البراعظمی بیلسٹک میزائل نہیں ہے لیکن کیا وہ دن آئے گا جب تہران کے میزائل واشنگٹن ڈی سی تک پہنچیں گے؟اس کے بعد اس رپورٹ میں شمالی کوریا کی میزائل طاقت اور ٹکنالوجی کا حوالہ دیا اور لکھا کہ شمالی کوریا نے ثابت کردیا ہے کہ یہاں تک کہ محدود صلاحیتوں والا لیکن پرعزم ملک  بھی ایک قابل اعتماد میزائل پروگرام کا مالک ہوسکتا ہے۔
اس رپورٹ میں میزائل بنانے میں ایران کی کامیابیوں کو بیان کیا گیا اور لکھا کہ  پہلا میزائل جسے ایران اپنے ملک کے اندر تعمیر کرنے میں کامیاب ہوا وہ "شہاب 1" 300 کلومیٹر کی دوری والا ایک مختصر فاصلہ والا میزائل تھا اس کے بعد ایران نے اپنے میزائلوں کی رینج میں اضافہ کرنے کی کوشش کی اور شہاب 2 بنایا جس کی رینج تقریبا km 500 کلومیٹر ہے۔
اس کے بعد ایران نے 1998 میں شہاب 3 کا تجربہ کیا جو  ایک ہزار بارہ کلوگرام وار ہیڈ اٹھا سکتا ے اور ایک ہزار کلومیٹر سے زیادہ کے فاصلہ پر مار کرسکتا ہے ، اس کو 2003 میں عمل میں لایا گیا۔
نیشنل انٹرسٹ نے مزید لکھا ہے کہ ایران کی میزائل پیش قدمی جاری رہی  اور اس بار تہران نے اپنے میزائلوں کی درستگی اور طاقت کو بڑھانے کی کوشش کی۔
اس بار ایران نے قادر 1 میزائل بنا کر اپنی میزائل کی درستگی میں اضافہ کیا  جس کی  رینج شہاب 3 میزائل سے کم ہے،اسی طرح اس نے عماد میزائل بنانے کے ساتھ اپنے قلیل فاصلے کے بیلسٹک میزائلوں کے استحکام ، تدبیر اور درستگی کو مستحکم کیا۔
رپورٹ کے مطابق ایران کی میزائل ٹکنالوجی میں ایک بہت بڑی تبدیلی "سجیل" میزائل کو بنانے کے ساتھ حاصل کی گئی اس بار  پچھلےسیال ایندھن والے میزائلوں کے برعکس  ایران نے ٹھوس ایندھن والا میزائل بنایا۔
سیجیل میزائل کا تجربہ 2008 میں کیا گیا تھا اور اس میں 1000 سے 2000 پاؤنڈ وار ہیڈ ہوتا ہے جس کی رینج شہاب 3 میزائل سے ملتی جلتی ہے اور امکان ہے کہ  یہ اس کی جگہ لے لے گا۔


0
شیئر کیجئے:
ہمیں فالو کریں
تازہ ترین