اگر میں پھر سے امریکہ کا صدر بن جاؤں گا تو ایک ہفتہ کے اندر ایران کے ساتھ معاہدہ کر لوں گا:ٹرمپ کا ایک اور دعوی

ریاستہائے متحدہ امریکہ کے صدرڈونلڈ ٹرمپ نے قومی پالیسی نشست 2020 میں دعوی کیا کہ اگر وہ امریکی صدارتی انتخابات میں جیت جاتے ہیں تو تہران اور واشنگٹن ایک ہفتہ سے ایک ماہ کے اندر معاہدے پر پہنچ جائیں گے!

ولایت پورٹل:الجزیرہ چینل کی رپورٹ کے مطابق  امریکی صدر ڈونلڈ ٹرمپ نے جمعہ کے روز 2020 کے قومی پالیسی اجلاس میں تقریر کرتے ہوئے ایران کے ساتھ معاہدے کے بارے میں اپنے پہلے دعوے کا اعادہ کیا، امریکی صدر نے اس سلسلے میں دعوی کیاکہ اگر میں انتخابات میں جیت جاؤں گا تو ایک ہفتہ سے ایک ماہ کے اندر اندر ایران کے ساتھ معاہدہ ہوجائے گا۔
دریں اثنا ، 11 اگست کو ٹرمپ نے نیو جرسی کے لانگ برانچ میں اپنے حامیوں کے نجی اجتماع میں دعوی کیا تھا کہ اگر وہ اگلے انتخابات میں کامیابی حاصل کرلیتےہیں تو وہ چار ہفتوں میں ایران کے ساتھ معاہدے پر پہنچ جائیں گےجبکہ اسلامی جمہوریہ ایران نے کہا ہے کہ وہ ایسے ملک کے ساتھ بات چیت کرنے کو تیار نہیں ہے جس نے اقوام متحدہ کی سلامتی کونسل کی قرارداد 2231 کی خلاف ورزی کرتے ہوئے مشترکہ ایٹمی معاہدہ کو چھوڑ دیا اور یکطرفہ طور پر ایران پر پابندیاں عائد کردی ہیں۔
قابل ذکرہے کہ ٹرمپ  انتخابات جیتے نے کےلیے یہ سب کر رہے ہیں کہ ان کی سیاست  دوسروں کے طاقت کی زبان میں بات کرنا اور انھیں ڈرانا دھمکانہ ہے جب کہ پوری دنیا جانتی ہے آج کے زمانے میں کوئی کسی سے نہیں ڈرتا نیز طاقت اور اسلحہ کے زور پر کسی کو اپنے تابع نہیں بنایا جاسکتا جیسا کہ ایران کے ثابت کرکے دکھایا ہے جب ٹرمپ ایٹمی معاہدہ سے خارج ہوئے تھے تو انھوں نے اس وقت بھی یہی دعوی کیا تھا کہ ایران ایک ہفتہ کے اندر میرے پاس آئے گا اور میں اپنی شرائط کے مطابق معاہدہ کروں گا لیکن سب نے دیکھا کہ ایسا کچھ نہیں ہوا۔




0
شیئر کیجئے:
ہمیں فالو کریں
تازہ ترین