Code : 4418 5 Hit

میں ہر روز جہنم کو اپنی آنکھوں سے دیکھتی ہوں؛سعودی جیل میں قید خاتون

سعودی عرب کی جیل میں قید سعودی سماجی کارکن کا کہنا ہے کہ وہ جیل میں ہر روز جہنم میں ہونے کی طرح گذارتی ہیں۔

ولایت پورٹل:برطانوی اخبار دی انڈیپنڈنٹ نے "جیل میں سعودی خواتین کارکنوں کے لئے ہر روز جہنم" کے عنوان سےاپنی ایک رپورٹ میں لکھا ہے کہ سعودی سماجی کارکن لجین الهذلول سعودی عرب کی ایک جہنم جیسی جیل میں قیدہیں اور وہ اس صورتحال کے خلاف احتجاج کرنے کے لئے کئی ہفتوں سے بھوک ہڑتال پر ہیں، رپورٹ کے مطابق ، لجین کی بہن لینا نے بتایا کہ ان کی جسمانی حالت بہت خراب ہے اور روزانہ زیادہ خراب ہوتی جارہی ہے۔
انڈیپنڈنٹ نے اپنی رپورٹ میں لکھا ہے کہ لجین کو جلد سے جلد سعودی عرب کی جیل سے رہا کیا جانا چاہئے کیونکہ انھیں جیل میں اذیت دی جارہی ہے، انہوں نے صرف خواتین کو سعودی عرب میں گاڑی چلانے کے حق کا مطالبہ کیا تھا لیکن اس کے فورا بعد ہی انھیں مئی 2018 میں کئی دیگر سعودی خواتین کارکنوں کے ساتھ گرفتار کر لیا گیا تھا، بھوک ہڑتال کی وجہ سے خراب جسمانی حالت کے باوجود  لجین الہزلول گذشتہ آٹھ مہینوں سے قید تنہائی میں ہیں۔
قابل ذکر ہے کہ ابھی تک یہ معلوم نہیں کہ انھیں کب کوٹ میں پیش کیا جائے گا اور سعودی کارکن اس وقت تک قید تنہائی میں ہی رہیں گی، انسانی حقوق کی تنظیموں کا کہنا ہے کہ لجین کو سعودی جیل میں بجلی کے کرنٹ دیے گئے ہیں اور جنسی طور پر ہراساں کیا گیا  ہے یہاں تک کہ انھیں مصنوعی ڈوبنے والے تشدد کا نشانہ بھی بنایا گیا ہے ۔


0
شیئر کیجئے:
ہمیں فالو کریں
تازہ ترین