ہنگری کے طلباء اور اساتذہ کا مہنگائی کے خلاف مظاہرہ

ہنگری کے طلباء اور اساتذہ کے ایک گروپ نے اس ملک کے دارالحکومت میں ایک مظاہرہ کرتے ہوئے اجرتوں میں اضافے اور تعلیمی اصلاحات کا مطالبہ کیا۔

ولایت پورٹل:ہنگری میں طلباء، لیکچررز اور دیگر طبقوں پر مشتمل مظاہرین کے ایک گروپ نے اس ملک کے دارالحکومت بوڈاپیسٹ میں 10 کلومیٹر طویل انسانی زنجیر بنائی جس سے زیادہ اجرتوں اور تعلیمی اصلاحات کے مطالبے کے لیے مظاہروں میں شدت پیدا ہوئی۔
روئٹرز خبر رساں ادارے کے مطابق ہنگری کے دیگر شہروں میں بھی احتجاجی ریلیاں نکالی گئیں، یاد رہے کہ ستمبر میں، احتجاج کرنے والے ہنگری کے اساتذہ نے "میں پڑھانا چاہتا ہوں" کے نام سے ایک احتجاجی تحریک شروع کی اور زیادہ اجرتوں اور ملازمین کی مناسب فراہمی کا مطالبہ کرنے کے مقصد سے سول نافرمانی شروع کی، انہوں نےوہ اپنے ہڑتال کے حق پر عائد پابندیوں پر بھی اعتراض کیا۔
روئٹرز نے لکھا، بوڈاپیسٹ شہر کے ایک ہائی سکول نے اس احتجاجی تحریک میں شامل ہونے پر کئی احتجاج کرنے والے اساتذہ کو نوکری سے نکال دیا، یاد رہے کہ ہنگری کے قوم پرست وزیر اعظم وکٹر اوربان کو 2010 کے انتخابات میں بھاری اکثریت سے اقتدار میں آنے کے بعد سے سب سے مشکل معاشی چیلنج کا سامنا ہے۔
قابل ذکر ہے کہ ہنگری کو پڑوسی ملک یوکرین میں جنگ کے نتائج کا سامنا کرنے اور ملکی کرنسی کی قدر میں تیزی سے گراوٹ کی وجہ سے اس ملک میں مہنگائی گزشتہ 26 سالوں میں غیر معمولی ریکارڈ تک پہنچنے والی ہے جس کے بعد تجزیہ کاروں کو ہنگری کی معیشت کا دیوالیہ ہونے کا خطرہ ہے۔

0
شیئر کیجئے:
ہمیں فالو کریں
تازہ ترین