پوری سردیوں میں بجلی کے بغیر رہنا ہوگا:یوکرین

یوکرین میں بجلی فراہم کرنے والی سب سے بڑی کمپنیوں میں سے ایک کے سی ای او نے خبردار کیا کہ یہ ملک اگلے سال مارچ کے آخر تک بجلی کے بغیر رہے گا۔

ولایت پورٹل:یوکرین کے صدر ولادیمیر زیلنسکی کے اس ملک کی آبادی کے ایک کروڑ لوگوں کو روشنی سے محروم کرنے پر مبنی بیان کے بعد، کیف میں توانائی کے ایک عہدہ دار نے اعلان کیا کہ یوکرین میں بجلی کا نہ ہونا ایک عام بات بن گئی ہے۔
واضح رہے کہ یوکرین میں بجلی فراہم کرنے والے سب سے بڑے اداروں میں سے ایک یاسنو ڈی ٹک توانائی کمپنی کے سی ای او سرگئی کووالنکو نے کہا کہ یہ ملک کم از کم اگلے سال مارچ کے آخر تک بجلی کی بندش کی حالت میں رہے گا۔
ریانوسٹی ویب سائٹ کے مطابق، کووالنکو نے اپنے بیان میں وضاحت کی کہ زیادہ تر امکان ہے کہ یوکرینی باشندوں کو کم از کم مارچ کے آخر تک بجلی کے بغیر رہنا پڑے گا، انہوں نے کہا کہ حقیقت یہ ہے کہ اگر پاور گرڈ اسٹیشنوں پر نئے حملے نہ ہوں تو بجلی کی موجودہ پیداوار میں اس قلت کو پورے ملک میں یکساں طور پر تقسیم کیا جا سکتا ہے، اس کا مطلب ہے کہ کٹوتی ہر جگہ ہو گی لیکن مختصر۔
 انھوں نے یوکرینی شہریوں سے سردیوں کے موسم کے لیے گرم کپڑے مہیا کرنے کے لیے کہتے ہوئے مزید کہا کہ بعد میں کسی پر الزام لگانے سے بہتر ہے کہ ابھی ایسا کریں، یاد رہے کہ اس سے قبل یوکرین کے صدر نے کہا تھا  کہ اس ملک کے کئی شہروں اور علاقوں میں بجلی کی کٹوتی ہوتی ہے جس کے نتیجہ میں تقریباً 10 ملین یوکرینی بجلی کے بغیر رہ رہے ہیں۔

0
شیئر کیجئے:
ہمیں فالو کریں
تازہ ترین