Code : 4101 5 Hit

حکومت اپنے وزیروں کے لیے پھانسی کا پھندہ تیار رکھے: لبنانی ترقی پسند سوشلسٹ پارٹی کے چیئرمین

لبنانی ترقی پسند سوشلسٹ پارٹی ’’ التقدمی الاشتراکی ‘‘کے رہنما نے لبنانی وزیر اعظم حسن دیاب کی حکومت کا تختہ پلٹنے اور مقدمے کی سماعت کا مطالبہ کیا۔

ولایت پورٹل:لبنان کے النشرہ چینل کی رپورٹ کے مطابق لبنانی ترقی پسند سوشلسٹ پارٹی کے رہنما ولید جمبلاط نےاس ملک  کے وزیر اعظم حسن دیاب کی حکومت کا تختہ پلٹنے اور مقدمے کی سماعت کا مطالبہ کیا، جمبلاط نے اتوار کے روز ٹیلی ویژن کودیے جانے والے ایک انٹرویو میں کہا کہ موجودہ حکومت کو معزول کیا جانا چاہئے اور ان کے خلاف مقدمے کی سماعت کرنی چاہئےنیز اس حکومت کو پارلیمنٹ کے اندر ہی ختم کرنا ہوگا ، انہوں نے دعوی کیا کہ ان کی پارٹی فرقہ واریت سے بڑھ کر انتخابی قانون بنانے پر عمل پیرا ہے اور دیاب حکومت کا تختہ الٹنا ایک عظیم فتح  ہوگی۔
لبنان کی ترقی پسند کرسچن سوشلسٹ پارٹی کے رہنما نے ایک عجیب و غریب بیان میں بیروت پورٹ دھماکے کی بین الاقوامی تحقیقات کا مطالبہ کیا ہے اورکہا ہے کہ  ان کے پاس حکومت کے لیے وزراء کو پھانسی دینےکی تیاری کرنے کے علاوہ کوئی مشورہ نہیں ہے،واضح رہے کہ بیروت دھماکے نے شہر کے باشندوں کی ایک بڑی تعداد کو ہلاک اور زخمی کرنے کے علاوہ ، بندرگاہ اور اس کے مکانات کو شدید نقصان پہنچایا ہے  جس کا تخمینہ 10 بلین اور 20 بلین ڈالر کے درمیان لگایا گیا ہے۔
ادھرسعد الحریری اور ولید جمبلاٹطسمیت حسن دیاب کی حکومت کی مخالفت کرنے والی سیاسی پارٹیوں نے انھیں اور حزب اللہ کو بیروت دھماکے کا ذمہ دار ٹھہرایا ہے،تاہم حکومت اور حزب اللہ نے ان پر عائد کیے جانے والے الزامات کی سختی سے تردید کی ہے،واضح رہے کہ حسن دیب کی حکومت کے خلاف یہ الزامات ایسے وقت میں عائد کیے جارہے ہیں جبکہ انھوں نے گذشتہ فروری میں ملک میں جاری اقتصادی بحران کی کیفیت میں حکومت سنبھالی تھی جبکہ اس سے پہلے اور 14 مارچ نامی تحریک کے سربراہ سعد الحریری تین سال سے زیادہ عرصے تک اس ملک کے وزیر اعظم رہے  تھے اور وہ اس دوران اتنے خوفناک دھماکے کا سبب  بننے والے بیروت کی بندرگاہ میں نائٹریٹ ذخیرے کا کچھ کر سکتے تھے ۔

0
شیئر کیجئے:
ہمیں فالو کریں
تازہ ترین