Code : 2803 94 Hit

جنرل سلیمانی مسئلہ فلسطین کے مکمل حامی تھے:فلسطینی استقامتی تحریک

فلسطین کی مزاحمتی تحریک کے ایک رہنما نے کہا کہ جنرل سلیمانی مسئلہ فلسطین کے حامی تھے اور انہوں نے فلسطین کے لئے ہر ممکن کوشش کی۔

ولایت پورٹل:فلسطینی  تحریک حماس کے پولیٹیکل بیورو کے رکن محمود الزہار نے جمعہ کے روز المیادین نیوز چینل کو دیے جانے والے اپنے ایک انٹرویو میں فلسطینی اسلامی مزاحمتی تحریک اور ایران کے مابین 1991 میں ہونے والے تعلقات کے سلسلہ میں اپنے خیالات کا اظہار کرتے ہوئے کہا کہ میں ایک سے زیادہ مرتبہ کمانڈر سلیمانی سے ملا ہوں  ،ہر بار انھوں نے  حماس کی جانب سے ادا کیے جانے والے  عظیم کردار کی تعریف کی ہے،الزہار نے مزید کہاکہ جب بھی میں ان سے ملتا تھا ، مجھے یقین میں اضافہ ہوتا تھا کہ  وہ شخص جس نے اپنے آپ کو قدس فورس کا کمانڈر کہا ہے اور اپنے آپ کو قدس سے منسلک کیا ہے وہ فلسطینی کاز کا مستقل حامی ہے،حماس تحریک کے سینئر عہدیدار نے تاکید کرتے ہوئے کہا کہ جنرل سلیمانی  کا عقیدہ تھا اور اس بات کے لیے تیار تھے کہ فلسطینی مقاصد کے لئے اسلامی جمہوریہ جو کچھ کرسکتا ہے کرے  اورانھوں نے ایسا ہی کیا،انہوں نے مزید کہاکہ ایران میں فلسطین کا مسئلہ کسی کا ذاتی مسئلہ نہیں ہےکہ  اگر سلیمانی اپنی تمام سابقہ کارناموں کو چھوڑ کر ہمارے درمیان سے چلے جائیں تو تعلقات ختم ہوجائیں گے، فلسطین کا مسئلہ ایران کے لئے ایک مرکزی مسئلہ ہے لہذا ہمارے اور ایران کے تعلقات باہمی اورسیاسی تعلقات ہیں،اورایران کی سیاست ایک  فرد پر نہیں بلکہ نظام پر منحصر ہے،الظہار نے پاسداران اسلامی کی قدس فورس  کے نئے کمانڈر کے ساتھ  حماس کے وفد کی ملاقات کا ذکر کرتے ہوئے کہا کہ فلسطینی مزاحمت اور اس اہم قوت اور ایرانی حکومت کے مابین تعلقات کو جاری رکھنے کے لئے قدس فورس کے نئے کمانڈر سے ملاقات کرنا بہت ضروری تھا۔




0
شیئر کیجئے:
फॉलो अस
नवीनतम