فرانس اسلام کے خلاف نہیں لڑرہا ہے:فرانسیسی صدر

فرانسیسی صدر ایمانوئل میکرون ، دنیا کے مسلمانوں کے غم و غصے کے بعد آخر کار اپنے اسلام مخالف موقف سے پیچھے ہٹ گئے ، اور اپنے تازہ ترین مؤقف کوبیان کرتے ہوئے یہ اعلان کیا کہ فرانس اسلام سے لڑ نہیں رہا ہے۔

ولایت پورٹل:فرانسیسی صدر میکرون نے پیغمبر اکرم ﷺ کے خلاف توہین آمیز تصاویر کی اشاعت کے تسلسل کی حمایت کرنے کے بعد  اپنے اسلام مخالف مؤقف پر زور دیا اور "آزادی اظہار" جیسے بین الاقوامی قانون کے اصولوں کی غلط تشریح کی جس پر پوری دنیا کے مسلمانوں نے بڑے پیمانے پر احتجاج کیا  اورفرانس کے خلاف سخت ردعمل سامنے آیا جس کے بعد وہ اپنے مؤقف سے پیچھے ہٹے اور برٹش فنانشل ٹائمز میں شائع ہونے والے اؤنے ایک بیان میں اعلان کیا کہ فرانس اسلام کے خلاف جنگ نہیں کرے گا۔
واضح رہے کہ پیغمبر اسلامﷺ کی شان میں گستاخی کے معاملے میں پیش آنے والے حالیہ واقعات کے بعد ، فرانس کے صدر نے پیر کو فنانشل ٹائمز میں شائع ہونے والےاپنے ایک بیان میں کہاہے کہ فرانس "اسلام پسند علیحدگی پسندی" کا مقابلہ کر رہا ہے اورکسی بھی طرح سے اسلام کے خلاف جنگ نہیں کرتا اور لڑتا نہیں ہے۔


0
شیئر کیجئے:
ہمیں فالو کریں
تازہ ترین