Code : 3042 13 Hit

فرانس کا صیہونی بستیوں کی تعمیر پر تنقید پر اکتفا

فرانسیسی وزارت خارجہ نے مقبوضہ مشرقی یروشلم میں صیہونی حکومت کے ہزاروں رہائشی یونٹوں کی تعمیر کے فیصلے پر فقط تنقید کرتے ہوئے اس کو دو ریاستی حل کو کمزور کرنے کا سبب قرار دیا۔

ولایت پورٹل:فرانسیسی وزارت خارجہ نے جمعہ کے روز مقبوضہ مشرقی قدس میں صیہونی حکومت کے ہزاروں رہائشی یونٹ بنانے کے فیصلے پر تنقید کی۔
فرانسیسی وزارت خارجہ کی جانب سے جاری ہونے والے بیان میں کہا گیا ہےکہ  فرانس  اسرائیل کی جانب سے مشرقی قدس میں حارا ہوما اور گیواٹ حماٹس کے علاقوں  میں کئی ہزار رہائشی یونٹوں کی تعمیر کے اعلان کی مذمت کرتا ہے۔
یادرہے کہ ان دونوں بستیوں میں توسیع سے مستقبل کی فلسطینی ریاست کی فلاح و بہبود کو براہ راست نقصان پہنچے گا جس پر یورپی یونین نے بار بار زور دیا ہے۔
فرانسیسی وزارت خارجہ  کےبیان میں کہا گیا ہے کہ اسرائیل کی جانب سے کسی بھی طرح کے رہائشی یونٹوں کی تعمیر بین الاقوامی قانون کے تحت غیر قانونی ہے اور یہ دو ریاستی حل کے لیے ایک چیلنج ہے۔
فرانس نے اسرائیلی حکام سے مطالبہ کیا ہے کہ وہ ان فیصلوں پر نظر ثانی کریں اور یکطرفہ کارروائی سے باز رہیں۔
یادرہے کہ صہیونی وزارت ہاؤسنگ نے دو روز قبل مقبوضہ قدس کے شمال میں جو کبھی  قدس ایئرپورٹ  کی زمین تھی ، اس پر 9،000 رہائشی یونٹوں کی تعمیر کے لئے ایک منصوبہ تیار کیا ہے۔
واضح رہے کہ ائر پورٹ قدس کے شمال میں قلندیا ضلع میں واقع ہے  جس کے آس پاس  کے محلوں اور علاقوں میں فلسطینی کنبے آباد  ہیں۔
قابل ذکر ہے کہ مغربی پٹی کا یہ واحد ائر پورٹ ہے جو 1967 کی جنگ سے پہلے اردن کے کنٹرول میں تھا۔
قابل ذکر ہے کہ 1967  کے بعد اسرائیل نےاس ہوائی اڈے کو اندرونی  پروازوں اور فوجی مقاصد کے لئے استعمال کیا لیکن  اکتوبر 2000میں شروع ہونے والے دوسرے انتفاضہ کے بعد اس کو یہ بھی بند کرنا پڑا۔


0
شیئر کیجئے:
फॉलो अस
नवीनतम