Code : 2790 33 Hit

ایٹمی معاہدہ کے سلسلہ میں فرانس کے ایران پربے بنیاد الزامات

فرانسیسی وزیر خارجہ نے ایران پر ایٹمی معاہدہ کی خلاف ورزی کرکے جوہری ہتھیاروں کے حصول کی کوشش کرنے کا الزام عائد کیا ہے۔

ولایت پورٹل:اسپوٹنیک نیوز ایجنسی کی رپورٹ کے مطابق فرانسیسی وزیر خارجہ ژاں یویس لاؤڈرین نے اسلامی جمہوریہ ایران کے جوہری پروگرام کے خلاف بے بنیاد الزامات کا اعادہ کرتے ہوئے دعوی کیا ہے کہ تہران ہی نے اس معاہدہ کی خلاف ورزی کی ہے،لاؤڈرین نے  ایک ریڈیو پروگرام کو انٹرویو دیتے ہوئے کہا ہے کہ اگرایران ویانا معاہدے پر عمل کرتا رہے تو شاید ایک سے دو سال کی مختصر مدت میں ایٹم بم تک پہنچ جائے گا،انہوں نے اپنے  انٹرویو میں وضاحت کرتے ہوئے کہا کہ جوہری معاہدہ ابھی ختم نہیں ہوا ہے، امریکی اس سے باہر ہوگئے جو ایک غلط فیصلہ تھا،فرانسیسی وزیر خارجہ نے بھی بدھ کے روز تہران کے مضافات میں یوکرائنی ہوائی جہاز کے حادثے کی تحقیقات میں مدد کرنے کی تیاری کا اعلان کرتے ہوئے کہا ہے کہ کسی بھی قیاس آرائی سے قبل یوکرائنی طیاروں کے تمام حقائق واضح کردیئے جائیں،یادرہے کہ اسلامی جمہوریہ ایران کی حکومت نے ایتوار کی شام  کو ایٹمی معاہدہ سے متعلق ایران کے وعدوں کو کم کرنے کے پانچویں اور آخری اقدام کا اعلان کیا ، جس کے مطابق ایران کو اب اپنی کارروائیوں بشمول افزودگی کی صلاحیت ، افزودگی کی فیصد ، افزودہ مواد کی مقداراور تحقیق اور ترقی ،پر کوئی پابندی نہیں ہوگی،ایران کے بیان میں کہا گیا ہے کہ مسلسل امریکی پابندیوں اور ان پابندیوں کے اثرات کو ختم کرنے کے یورپی وعدوں کی ناکامی کے پیش نظر ، تہران سینٹری فیوجز کی تعداد سمیت ، افزودگی پر تمام پابندیاں اٹھا رہا ہے،اس کے باجودتہران نے یہ بھی کہا ہے کہ وہ بین الاقوامی جوہری توانائی ایجنسی کے ساتھ تعاون  جاری رکھے گا اوراگر معاہدے کے دوسرے فریق  پابندیاں  مکمل طور پرختم کردیتے ہیں تو ایران معاہدے کےسلسلہ میں اپنے وعدوں پر پھر سے عمل پیرا  ہوجائے گا۔

0
شیئر کیجئے:
ہمیں فالو کریں
تازہ ترین