فیس بک کی ایک بار پھر 44 ملین صارفین کے ساتھ دھوکہ بازی

برطانوی فنانشل کنڈکٹ اتھارٹی نے فیس بک کے خلاف ایک مقدمہ دائر کیا ہے جس میں تقریباً 44 ملین فیس بک صارفین کی نمائندگی کی گئی ہے کہ ان کے حقوق کی خلاف ورزی کی گئی ہے۔

ولایت پورٹل:روئٹرز خبر رساں ادارے کی رپورٹ کے مطابق برطانوی فنانشل کنڈکٹ اتھارٹی کی سینئر ایڈوائزر اور مسابقتی قانون کی ماہر لیزا لوڈل گورمسن نے کہا  کہ 2015 سے 2019 تک فیس بک استعمال کرنے والے تقریباً 44 ملین صارفین کی جانب سےشکایت کی گئی ہے کہ اس پلیٹ فارم نے ان کی نجی معلومات کا غلط استعمال کرکے ان کے حقوق کی خلاف ورزی کی ہے۔
رپورٹ کے مطابق شکایت میں کہا گیا ہے کہ  فیس بک نے اپنے صارفین پر غیر منصفانہ شرائط عائد کر کے اربوں پاؤنڈز کمائے ہیں اور اس سوشل نیٹ ورک کی سہولیات کے ذریعے صارفین کی نجی معلومات اکٹھی کی ہیں ۔
واضح رہے کہ شکایت کے جواب میں فیس بک نے کہا کہ لوگ اس کی خدمات اس لیے استعمال کرتے ہیں کیونکہ وہ فیس بک پلیٹ فارم پر شیئر کی جانے والی معلومات پر بامعنی کنٹرول حاصل کر سکتے ہیں،یادرہے کہ اس کمپنی کو پہلے بھی ریاستہائے متحدہ میں اسی طرح کے مقدمات کا سامنا کرنا پڑا ہے۔
 نیویارک اور دیگر ریاستوں کے وکلاء نے کولمبیا کی ڈسٹرکٹ کورٹ آف اپیل میں مقدمہ دائر کیا، اور دعویٰ کیا کہ فیس بک ایک اجارہ دار کمپنی ہے جس نے مسابقت کو ختم کرنے کے لیے اپنی مارکیٹ کی طاقت کا استعمال کیا ہے اور اس مقصد کے لیے فیس بک نے نئے حریفوں کو خریدلیں یا دفن کردیں کا اجارہ دار طریقہ استعمال کیا ہے، جس سے صارفین اور عام لوگوں کو نقصان ہوتا ہے۔

0
شیئر کیجئے:
ہمیں فالو کریں
تازہ ترین