ٹویٹر کا سابق مینیجر آل سعود کا جاسوس

ٹویٹر کے ایک سابق ایگزیکٹیو کو سعودی عرب کے لیے جاسوسی کا قصوروار پایا گیا۔

ولایت پورٹل:ٹوئٹر کے سابق مینیجرز میں سے ایک احمد ابو آمو کو سان فرانسسکو کی وفاقی عدالت میں سعودی عرب کے لیے جاسوسی کا مجرم قرار دیا گیا، ابو آمو ایک امریکی-لبنانی شہری ہیں جنہوں نے پہلے ٹوئٹر پر مشرق وسطیٰ اور شمالی افریقہ میں صحافیوں اور مشہور شخصیات کے ساتھ سرحد پار مواصلات کے ڈائریکٹر کے طور پر کام کیا۔
واضح رہے کہ ابو آمو کو سعودی عرب کے ایجنٹ کے طور پر کام کرنے اور سعودی شاہی خاندان سے منسلک ایک عہدہ دار سے ملنے والی رقم چھپانے کی کوشش سمیت چھ الزامات کا مجرم پایا گیا ،مقدمے کے پراسیکیوٹر نے کہا کہ بادر العساکر جو سعودی عرب کے بادشاہ محمد بن سلمان کے قریبی مشیر ہیں، نے ابوعمو کو ان کی معلومات کا استعمال کرتے ہوئے ٹویٹر اکاؤنٹس تک رسائی حاصل کرنے اور سعودی حکومت کے مخالفین کے بارے میں ذاتی معلومات حاصل کرنے کے لیے رکھا،سعودی حکومت کے ان نمایاں مخالفین میں سے ایک مجتہد نامی شخص ہے جس کے ٹوئٹر پر لاکھوں فالوورز ہیں۔
پراسیکیوٹر نے یہ بھی کہا کہ ابو آمو کو کم از کم 300000 ڈالر نقد اور 20000 ڈالر کی ایک لگژری گھڑی العساکر سے ملی اور انہوں نے یہ رقم لبنان میں اپنے ایک رشتہ دار کے اکاؤنٹ میں جمع کرائی اور اس اکاؤنٹ کو امریکہ میں اپنے اکاؤنٹ سے جوڑ دیا، ابو آمو کو انٹرنیٹ فراڈ، منی لانڈرنگ اور سازش کا بھی قصوروار پایا گیا۔

0
شیئر کیجئے:
ہمیں فالو کریں
تازہ ترین