یورپ کے بُرے دن

توانائی کے بحران نے انگلینڈ میں اشیائے خوردونوش کی قیمتوں میں اضافہ کر دیا ہے اور اخراجات میں اس اضافے نے ان شہریوں کی زندگی اجیرن کر دی ہے جو زندگی گزارنے کے اخراجات کے بحران سے دوچار ہیں۔

ولایت پورٹل:بینک آف انگلینڈ نے پیش گوئی کی ہے کہ اس ملک میں اس سال افراط زر کی شرح 13 فیصد سے زیادہ تک پہنچ جائے گی جبکہ ایک تہائی برطانوی گھرانوں سے توقع کی جاتی ہے کہ وہ اپنی آمدنی کا دس فیصد سے زیادہ توانائی پر خرچ کریں گے اور اب خوراک کے بڑھتے ہوئے اخراجات غربت میں اضافہ کر رہے ہیں۔
واضح رہے کہ یوکرین پر روسی فوجی حملے کے بعد، جس کی وجہ سے گندم اور تیل جیسی اہم اشیائے خوردونوش کی قلت پیدا ہوگئی جس سے اس سال کے شروع میں دنیا میں اشیائے خوردونوش کی قیمتوں میں غیرمعمولی شرح سے اضافہ ہوا، اور یورپ میں خوراک پیدا کرنے والے اب اس میں اضافے کے ساتھ ساتھ توانائی کی قیمت، گیس، کوئلہ اور بجلی کے ساتھ جدوجہد کررہے ہیں جو اس کی معمول کی قیمت سے کئی گنا زیادہ فروخت ہوتی ہے۔
 لیکن بدترین دن ابھی آنا باقی ہیں کیونکہ جب سردیوں کے تاریک اور ٹھنڈے دن آتے ہیں تو حرارتی اور بجلی کی پیداوار کے لیے توانائی کی طلب بڑھ جاتی ہے۔

0
شیئر کیجئے:
ہمیں فالو کریں
تازہ ترین