تائیوان کے پتے کھیلنا بند کرو؛ چین کا امریکہ کو انتباہ

چین نے امریکی میڈیا پر دھوکہ دھی کا الزام عائد کرتے ہوئے  انتباہ دیا ہے امریکہ کا حکومتی میڈیا تائیوان  میں ہمارے جائز اقدامات کو توڑ موڑ کر پیش کرنے سے باز رہے۔

ولایت پورٹل:چین کے وزیر خارجہ وینگ یی امریکہ کو انتباہ دیتے ہوئے کہا ہے کہ امریکہ نے اپنی قومی خودمختاری کے تحفظ کے لیے چین کے جائز اقدامات کو زبردستی توڑ مروڑ کر پیش کیا، جس نے امریکی میڈیا کی غنڈہ گردی ، منافقت اور دھوکہ دہی کو پوری طرح سے بے نقاب کر دیا ہے۔
وانگ نے کہا کہ جبر کی بات کرتے ہوئے، امریکی حکومت نے ہیٹی کی فوجی حکومت کو 1994 میں اقتدار چھوڑنے پر مجبور کیا، اور اسے زبردستی سفارت کاری کی درسی کتاب کی مثال کہا جبکہ 2003 میں اس نے "زبردستی سفارت کاری" کے لیے 30.3 بلین امریکی ڈالر کے فوجی اخراجات کو واضح طور پر درج کیا، اس نے اپنے حریفوں جیسے Alstom اور Toshiba کے خلاف کریک ڈاؤن کرنے میں کوئی کسر نہیں چھوڑی اور TSMC، Samsung اور دیگر کمپنیوں کو ریاست ہائے متحدہ امریکہ کو چپ سپلائی چین ڈیٹا فراہم کرنے پر مجبور کیا۔
انہوں نے کہاکہ یہ بالکل واضح 'بلیک میل ڈپلومیسی' ہے،وانگ نے زور دے کر کہا کہ یہ حقیقت واضح ہے کہ لتھوانیا نے چین کے ساتھ سفارتی تعلقات کے قیام پر کیے گئے اپنے سیاسی عہد کی خلاف ورزی کی اور دنیا میں ایک چین، ایک تائیوان کا غلط تاثر پیدا کیا،انہوں نے مزید کہا کہ لیتھوانیا میں بصیرت کے حامل لوگوں نے بھی اس پر تنقید کی ہے۔
وانگ نے کہا کہ امریکہ نے شروع سے ہی لتھوانیا کے حکام کو ایک چائنا کے اصول کو کمزور کرنے کے لیے اکسایا اور پھر ان کی حمایت، مدد اور حوصلہ افزائی کی، وانگ نے مزید کہا کہ امریکہ سیاسی حساب کتاب کرنے کی کوشش کرتا ہے جس کا مقصد تائیوان کو چین پر قابو پانے کے لیے استعمال کرنا ہے۔
وانگ نے کہاکہ ہم لتھوانیا کے فریق پر زور دیتے ہیں کہ وہ اپنی غلطیوں کو درست کرے اور چین مخالف قوتوں کے لیے ایک پیادے کے طور پر کام نہ کرے، ہم امریکی فریق کو بھی متنبہ کرتے ہیں کہ تائیوان کارڈ کھیلنا نقصان دہ ہے اور وہ خود جل جائے گا۔

0
شیئر کیجئے:
ہمیں فالو کریں
تازہ ترین