Code : 3148 31 Hit

نیتن یاہو اور اردگان دونوں قابض ہیں:اقوام متحدہ میں شامی مندوب

اقوام متحدہ میں شام کے مستقل نمائندے نے صہیونی وزیر اعظم اور ترک صدر ایک جیسا قرار دیتے ہوئے کہا ہے کہ شام ادلب میں اسکندریہ کے تجربے کو دہرانے کی اجازت نہیں دے گا۔

ولایت پورٹل:اقوام متحدہ میں شام کے مستقل نمائندہ بشار الجعفری نے النشرہ نیوز ایجنسی کو انٹرویو دیتے ہوئے کہا ہے کہ دہشت گردی کے خلاف جنگ اس وقت تک جاری رہے گی جب تک شام کے تمام علاقوں پر دوبارہ قبضہ نہیں کرلیا جاتا نیز انہوں نے اس خیال کی مخالفت کی کہ شام نے اپنے خلاف اسرائیلی جارحیت پرکوئی ردعمل ظاہر نہیں کیا ہے۔
الجعفری نے کہا کہ صیہونی حکومت براہ راست شام میں سرگرم  مسلح گروہوں اور کی حمایت  کرتی ہےاور اسی لئے حملے کرتی ہے۔
انھوں نے مزید کہا کہ دہشت گردی کے خلاف جنگ میں شامی فوج اور اس کے اتحادیوں کے حلب سے حمص اور دمشق سے لے کر گولان تک تمام حملے فیصلہ کن رہے ہیں۔
لیکن آج ادلب کی لڑائی دہشت گردی کے خلاف فتح کا ایک اہم حصہ ہے ، ہر کوئی اسے جانتا ہے اور اقوام متحدہ نے بھی  اپنی سرکاری رپورٹوں میں اس کو واضح طور پر تسلیم کیاہے۔
انہوں نے کہا کہ شام نے دہشت گردی کے خلاف اپنی بیشتر جنگ مکمل کرلی ہے  لیکن آج اسرائیلی  بینامین نیتن یاہو  جیسے انسان کی سربراہی کی وجہ سے پریشانی میں مبتلا ہیں کیونکہ انہیں لگتا ہے کہ شامی حکومت اپنے ایرانی بھائیوں ، حزب اللہ اور دوست روس کے ساتھ ملک کر دہشت گردی کے خلاف لڑرہی  اور کامیاب بھی ہورہی ہےنیز  وہ  یہ بھی جانتے ہیں کہ انہوں نے شام کے خلاف اپنے امریکی اتحادیوں کے ساتھ مل کر دہشت گردی کے جو ہتھیار استعمال کیے تھے وہ اب خود انھیں کے گلے پڑ رہے ہیں اور ان کا نشانہ انھیں کی طرف ہے  اور اس کی بھاری قیمت ادا کرنا پڑے گی۔


0
شیئر کیجئے:
ہمیں فالو کریں
تازہ ترین