Code : 2593 82 Hit

بن سلمان کا ویژن 2030ناکام

محمد بن سلمان کے اسٹریٹجک منصوبہ کے طور پر 2030 کے نقصانات اور خامیاں آہستہ آہستہ سامنے آرہی ہیں اور سعودی ذرائع کے مطابق جس طرح سے یہ منصوبہ چل رہا ہے اس سے وہ خود بھی ناخوش ہیں۔

ولایت پورٹل:بلومبرگ نیوز ویب سائٹ کی رپورٹ کے مطابق تیل کی آمدنی سے بے نیاز ہونے کو پیش نظر رکھتے ہوئے بنائے جانے والے سعودی عرب کے ویژن 2030 منصوبے کےچار سال بعد ریاض کے کچھ داخلی ذرائع اس منصوبے پر نظر ثانی کرنے اور  اس کےکچھ پروگراموں کی ناکامی کی اطلاع دے رہے ہیں،رپورٹ کے مطابق سعودی حکومت نے تیل کے بعد کےلیے بنائے جانے  والےاپنے ویژن2030 پر نظر ثانی کرنا شروع کردی ہے ، اور محمد بن سلمان اس کے تحت انجام پانے والے اقدامات اور ان کی رفتار سے ناخوش ہیں،مذکورہ ویب سائٹ مزید لکھا ہے کہ سعودی حکومت لاگتوں پر قابو پانے کی کوشش کر رہی ہے  اور 2030ویژن کے تحت سیکڑوں منصوبوں کا مسودہ تیار کرنے والے سعودی عہدیدار مختلف پروگراموں کو کم کرنے ، ان میں سے کچھ میں ترمیم یا انضمام کے خواہاں ہیں ، اور کچھ نے کہا ہے کہ ان چار سالوں کے دوران یہ پہلا موقع نہیں ہے بلکہ اس ویژن کے اعلان ہی  قبل ہی سعودی حکام ان منصوبوں پر نظر ثانی کرنے کی کوشش کر رہے ہیں،قابل ذکر ہے کہ اس ویژن  کا مقصد تیل پر مبنی سعودی حکومت کے محصولاتی ذرائع کو متنوع بنانا اور غیر ملکی سرمایہ کاری ، بجٹ میں توازن برقرار کرنااور نیجی کاری کو راغب کرنا ہے ، لیکن باخبر ذرائع کا کہنا ہے کہ کچھ اہداف ناکام ہوگئے ہیں،اور سرکاری ملازمین پیچیدہ تبدیلیوں اور منصوبے کی ترجیحات سے ناخوش ہیں،بلومبرگ کے مطابق  تین باخبر ذرائع نے اپنا نام ظاہر نہ کرتے ہوئے بتایا کہ اس منصوبے پر نظر ثانی کی ایک وجہ منصوبے کے اخراجات پر قابو پانا ہے اور محمد بن سلمان اب تک کے نتائج سے مطمئن نہیں ہیں۔





0
شیئر کیجئے:
ہمیں فالو کریں
تازہ ترین