بن سلمان کو سب سے زیادہ صیہونیوں کو گلے لگانے کی جلدی ہے:اسرائیل میں سابق امریکی سفیر

تل ابیب میں امریکی سابق سفیر نے اس بات پر زور دیا کہ سعودی ولی عہد شہزادہ صہیونی حکومت کے ساتھ تعلقات معمول پر لانے کے لئے سعودی عرب میں سب سے زیادہ تیار ہیں۔

ولایت پورٹل:مقبوضہ فلسطین میں امریکہ کے سابق سفیر ، ڈین شاپیرو نے صیہونی اخباریدیوت احرنوٹ کو بتایا کہ سعودی اسرائیل تعلقات کے جائزے سے یہ ظاہر ہوتا ہے کہ سعودی خاص طور پر تعلقات کو معمول پر لانے کے معاملے میں اسرائیل کے قریب پہنچ گئے ہیں لیکن اس قربت کی حد معلوم کرنا مشکل ہے،انھوں نے یہ کہتے ہوئے کہ متحدہ عرب امارات اور بحرین ، خاص طور پر بحرین سعودی حکومت کی حمایت کے بغیرصیہونی حکومت کے ساتھ تعلقات کو معمول پر آنے کے عمل میں داخل نہیں ہوسکتا تھا، اس بات کی تصدیق کی کہ متحدہ عرب امارات اور بحرین نے ریاض کی جانب سے سبز روشنی ملنے کے بعد یہ قدم اٹھایا،انھوں نے کہا کہ اگر واقعی سعودی مخالفت کرتے تو ہم یقینا ان ممالک کے ساتھ تعلقات کو معمول پر لانے میں کامیاب نہیں ہوسکتے تھے۔
 عرب 21 نیوز ویب سائٹ نے امریکی سفارت کار کے حوالے سے نقل کیا ہے کہ سعودی ولی عہد شہزادہ محمد بن سلمان فلسطین کے مفاد کے لئے اور اسرائیل کے ساتھ تعاون کے امکان سے ، اپنے والد شاہ سلمان سے ذرا ہٹ کر سوچتے ہیں لہذا وہ اسرائیل کے قریب جانے کے لئے کسی اور سے زیادہ تیار ہیں لیکن اس میں وقت لگے گا،انہوں نے مزید کہاکہ اسرائیل کے ساتھ سعودی عرب کے تعلقات کے مستقبل کے معیار میں سے ایک یہ ہے کہ یمن کی جنگ میں شہریوں کے قتل ، جمال خاشقجی کا قتل اور سعودی عرب میں انسانی حقوق کی پامالیوں کی وجہ سے اس ملک کے ساتھ امریکہ اور بائیڈن حکومت کے تعلقات کا جائزہ لیا جائےاس لیے کہ  امریکہ کے ساتھ تعلقات سعودی عرب کو اسرائیل کے سلسلہ میں متاثر کریں گے۔


0
شیئر کیجئے:
ہمیں فالو کریں
تازہ ترین