عرب ممالک کا چین کی طرف جھکاؤ ؛امریکی پیغامات اور دھمکیاں

متحدہ عرب امارات کے مرکز میں چینی فوجی اڈے کی تعمیرکے بارے میں لوگوں کا خیال ہے کہ اس کہانی کی ایک اور جہت ہےجس کا تعلق عرب ممالک کے ایک طرف واشنگٹن اور دوسری طرف بیجنگ کے ساتھ دلچسپ تعلقات سے ہے۔

ولایت پورٹل:امریکی صدر جو بائیڈن کی انتظامیہ نے متحدہ عرب امارات کے دارالحکومت ابوظہبی میں بندرگاہ خلیفہ کی سیٹلائٹ تصاویر کو چینی فوجی اڈے کی تعمیر کے آپریشن سے تعبیر کیا،بائیڈن نے متعدد بار مبینہ طور پر متحدہ عرب امارات میں چین کی موجودگی کے بارے میں تشویش کا اظہار کیا ہےجبکہ چینی فوجی اڈے کی تعمیر کو روکنے کے لیے سرکاری حکام کو یو اے ای بھیجا ہے۔
یادرہے کہ  وہ ممالک جو غیر ملکی امداد پر انحصار کرتے ہیں اور جن کی معیشتوں کا انحصار غیر ملکی سرمایہ کاری پر ہے، جیسے کہ سعودی عرب اور متحدہ عرب امارات، کو غیر ملکی حمایت اور سرمایہ کاری کے ذرائع سے الگ نہیں کیا جا سکتا،تاہم اس معاملے کو ایک اور زاویے سے دیکھنے کے لیے ہمیں واشنگٹن اور ان ممالک کے درمیان اختلاف رائے کی طرف اشارہ کرنا چاہیے، خاص طور پر ایران کے ساتھ معاملات میں، یہ اختلاف ایران کی جانب سے گلوبل ہاک ڈرون کو مار گرائے جانے کے بعد اور ان ممالک کے درمیان اور ان ممالک کے درمیان تیزی سے بڑھنے والےاختلافات کی طرف اشارہ کرنا چاہیے۔
واضح رہے کہ  گلوبل ہاک ڈرون  کو گرائے جانے کے بعدامریکی صدر ڈونلڈ ٹرمپ اور صیہونی حکومت کو مشتعل کرتے ہوئے امریکہ کو ایران کا جواب دینے کے لیے بہت اکسایا گیا تاہم  اس وقت یہ اس گروہ کی بڑی شکست تھی۔

0
شیئر کیجئے:
ہمیں فالو کریں
تازہ ترین