ایپل کا صہیونی جاسوسی سافٹ وئر بنانے والی کمپنی کے خلاف مقدمہ دائر

ایپل کور نے اسرائیلی کمپنی این ایس او گروپ کے خلاف مقدمہ دائر کیا ہےجسے بائیڈن حکومت نے اس ماہ کے شروع میں بلیک لسٹ میں شامل کیا تھا۔

ولایت پورٹل:ہل نیوز ویب سائٹ کی رپورٹ کے مطابق ایپل نے اسرائیلی کمپنی پرجو پیگاسس مالویئر بھی بناتی ہے، پر ایپل کے صارفین کو نشانہ بنانے اور ان کی نگرانی کرنے کا الزام لگایا ہے۔ منگل کے روز کیلیفورنیا کی وفاقی عدالت میں دائر ایپل کور کے مقدمے میں اسرائیلی کمپنی کو سلیکون سافٹ ویئر، خدمات یا آلات کے استعمال تک مستقل رسائی سے نہ دینےکی کوشش کی گئی۔
 ہل کے مطابق یہ مقدمہ اسرائیلی کمپنی کی مالویئر جاسوسی پروڈکٹ پیگاسس کی تاثیر کو سنجیدگی سے کمزور کر سکتا ہے،یادرہے کہ  اسرائیل کا جاسوسی پروگرام "پیگاسس" پہلی بار 2016 میں سامنے آیا تھا جس کے ذریعہ امارتی کارکن احمد منصور کا سیل فون انتہائی جدید اسپائی ویئر پروگراموں کے ذریعے ہیک کر لیا گیا، جس کے بعد منصور کو گرفتار کر لیا گیا اور وہ ابھی تک قید میں ہیں۔
قابل ذکر ہے کہ  اس پروگرام کی سب سے نمایاں خصوصیت "زیرو کلک" ٹیکنالوجی ہے یا صارف کا مشکوک لنک پر رابطہ کیے بغیر فون کو ہیک کرنااور یہ فون کو ہیک کرنے اور صارفین  کے علم میں لائے بغیر جاسوسی کرنے کی جدید ترین تکنیک ہے، کیونکہ یہ بہت زیادہ مہنگا ہے اور اس پر تین ملین ڈالر سے زیادہ کی لاگت آتی ہے۔
درایں اثنا صیہونی این ایس او نے دعویٰ کیا کہ اس پروگرام کا بنیادی مقصد دہشت گردی کے خلاف لڑنا ہے ،تاہم برطانوی سکیورٹی ماہر جیک مور کے مطابق جن لوگوں کو نشانہ بنایا گیا ہے وہ انسانی حقوق کے کارکن، صحافی، سیاست دان اور کچھ امیر لوگ ہیں  جس سے معلوم ہوتا ہے کہ اس کے پیچھے جو لوگ ہیں ان کا مقصد مخصوص پروگرام  اورمخصوص لوگوں کو نشانہ بناتا ہے۔

0
شیئر کیجئے:
ہمیں فالو کریں
تازہ ترین