Code : 2356 49 Hit

ہندوستانی ریاست منی پور کا علیحدگی کا اعلان

منی پور کے مہا راجہ لیشمبا سناجائوبا کے نمائندے کا کہنا ہے کہ نریندرمودی کی حکومت عدم برداشت کی حامل ہے اور ہندو توا کی بالادستی کیلئےچھوٹی قوموں کو طاقت کے زور پر ختم کرنے کے درپے ہے۔

ولایت پورٹل:عالمی میڈیا کی رپورٹ کے مطابق ہندوستان کی ریاست منی پور کے مہا راجہ لیشمبا سناجائوبا کے نمائندے نے گزشتہ روزہندوستان  سے علیحدگی اور منی پور اسٹیٹ کونسل قائم کرنے کااعلان کردیا، لندن میں پریس کانفرنس منی پور سٹیٹ کونسل کے وزیراعلیٰ یمبن بیرن اور امور خارجہ اور دفاع کے وزیر نارنگبم سمرجیت نے میڈیا کے سامنے اعلان کیا کہ وہ مہاراجہ منی پور لیشمبا سناجائوبا کی جانب سے منی پور سٹیٹ کونسل کے نام سے جلاوطن مملکت کے قیام کا اعلان کر رہے ہیں، جلاوطن حکومت سینٹرل لندن میں ہوگی،انھوں نے ڈاکومنٹ پیش کیا جس کے تحت مہاراجہ منی پور نے مارچ 2013 کو حکم نمبر 12 کے تحت ریاست منی پور کے سیاسی مسائل حل کرنے کا اختیار دیا ہے،دونوں نے اس بات کی تصدیق کی کہ انھوں نےہندوستان میں رہتے ہوئے آزادی کااعلان کرنے پر گرفتاری، ظلم و تشدد اور  سکیورٹی فورسز کی جانب سے ہلاک کئے جانے سے بچنے کیلئے ستمبر 2019 کو برطانیہ میں پناہ طلب کی ہے، انھوں نے کہا کہ ہم سمجھتے ہیں کہ آزادی کا اعلان اور عالمی برادری سے اس کی توثیق حاصل کرنے کا یہ مناسب وقت ہے، ہم اقوام متحدہ کے تمام رکن ممالک سے اپیل کرتے ہیں کہ وہ منی پور کی جلاوطن حکومت کو تسلیم کرنے کااعلان کریں،انھوں نے کہ منی پور کے 3 ملین عوام ایک باوقار قوم کی حیثیت اپنی پہچان چاہتے ہیں، انھوں نے کہا کہ ہندوستانی حکومت کے ساتھ مذاکرات کی کوششوں کےنتیجے میں ہمیں نفرت اور مظالم ملے، ہندوستان میں رہتے ہوئے آزادی کااعلان کرنا ہمارے لئے ممکن نہیں تھا،کیونکہ ایسی صورت میں ہمیں گرفتاریوں، تشدد اور ماورائے عدالت قتل کاسامنا کرنا پڑتا،انھوں نے کہا کہ نریندرمودی کی حکومت عدم برداشت کی حامل ہے اور ہندو توا کی بالادستی کیلئےچھوٹی قوموں کو طاقت کے زور پر ختم کرنے کے درپے ہے۔
مہر


0
شیئر کیجئے:
फॉलो अस
नवीनतम