داعش کو دوبارہ زندہ کرنے کے امریکی حربے

دہشت گردانہ کارروائیوں کے سلسلے میں داعش کی حکمت عملی میں تبدیلی کو خطے میں اس کے ناکام منصوبوں کو بحال کرنے کی نئی امریکی حکمت عملی سے الگ نہیں کیا جا سکتا۔

ولایت پورٹل:اس حقیقت کے باوجود کہ داعش کی خود ساختہ خلافت کے خاتمے کو 5 سال سے زیادہ کا عرصہ گزر چکا ہے، اس تکفیری دہشت گرد گروہ کے عناصر اب بھی مختلف خطوں بالخصوص عراق اور شام میں غیر فعال سیلوں کی شکل میں کام کر رہے ہیں اور ہر موقع کو استعمال کر رہے ہیں،2021 کے آغاز اور خطے میں پیش آنے والی صورتحال کے ساتھ خاص طور پر امریکہ میں حکومت کی تبدیلی کے بعد، جو کہ مشرق وسطیٰ میں اس کی ظاہری پالیسیوں میں تبدیلی کے ساتھ تھی، داعش کے عناصر کی نقل و حرکت میں نمایاں اضافہ ہوا اور تکفیری عناصر  نے عراق اور شام میں متعدد جرائم کا ارتکاب کیا، خاص طور پر جنوری 2021 میں بغداد کے خونریز بم دھماکے۔
تاہم گزشتہ چند مہینوں میں خطے میں داعش کی نقل و حرکت سے ظاہر ہوتا ہے کہ دہشت گرد گروہ دوبارہ طاقت حاصل کرنے کے لیے منظم ہونے کی کوشش کر رہا ہے،شام کے شہر الحسکہ میں ایک قیدی پر داعش کا حملہ اور اس سال جنوری میں جیل سے تکفیری گروہ کے ارکان کا فرار اور اسی دوران عراقی فوج کی ایک بیرک پر وحشیانہ دہشت گردانہ حملے، داعش کو دوبارہ سرخیوں میں لے آئے۔
مشرق وسطی میں مبصرین کا خیال ہے کہ مختلف علاقوں میں اپنے حملے کرنے کے لیے داعش کے نئے حربے کو پراکسی جنگوں کے لیے دہرائے جانے والے امریکی منظر نامے سے الگ نہیں کیا جا سکتا،ایسا لگتا ہے کہ موجودہ حالات میں امریکی اہداف کے حصول میں ناکامی کی وجہ سے داعش کے عناصر کی انفرادی نقل و حرکت کی حکمت عملی واشنگٹن کے ایجنڈے سے الگ نہیں ہے اور داعش کی کارروائیوں کا اگلا دور ممکنہ طور پر بڑے نیوکللی کی صورت میں ہوگا۔

0
شیئر کیجئے:
ہمیں فالو کریں
تازہ ترین