آل سعود ہرگز بھرسے کے لائق نہیں:امریکی سینیٹر

ایک امریکی سینیٹر نے کہا ہے کہ وہ توقع کرتے ہیں کہ نئے منتخب ہونے والے امریکی صدر سعودی انسانی حقوق کے معاملے پر نظر ثانی کریں گے۔

ولایت پورٹل:الجزیرہ نیوز چینل کی رپورٹ کے مطابق  امریکی ڈیموکریٹ سینیٹر کرس مورفی نے کہا ہے کہ  کہ اب یہ وقت آگیا ہےکہ ہم سمجھ جائیں  کہ سعودی عرب کسی بھی طرح سے ایک مثالی اتحادی نہیں ہے اور اس ملک کے سلسلہ میں  ہماری ترجیحات ایک طویل عرصے سے غلط ہیں۔
انہوں نے کہا کہ وہ توقع کرتے ہیں کہ منتخب امریکی صدر جو بائیڈن سعودی عرب کے انسانی حقوق کے ریکارڈ پر نظر ثانی کریں گے اور عالمی انتہا پسند تحریکوں کے ستون کی حیثیت سے ریاض کے کردار کا جائزہ لیں گے۔
واضح رہے کہ موجودہ امریکی صدر ڈونلڈ ٹرمپ کے سعودی رہنماؤں سے مضبوط تعلقات ہیں اور وہ اس ملک کے انسانی حقوق کے امور کو حل کرنے سے گریز کرتے ہیں۔
دریں اثنا سعودی عرب کو اپنے مخالفین کے قتل اور جبر کے لئے وسیع پیمانے پر بین الاقوامی تنقید کا سامنا کرنا پڑ رہا ہے  جن میں سعودی صحافی اور نقاد جمال خاشقجی کاقتل اور انسانی حقوق کے کارکنوں کی نظربندیاں ، بشمول سعودی خاتون کارکن لجین الهذلول کی گرفتاری اور ان پر بہیمانہ تشدد شامل ہے۔
قابل ذکر ہے کہ اس سے قبل ٹرمپ نے ایک انٹرویو میں استنبول میں سعودی قونصل خانے میں خاشقجی کے قتل میں  سعودی ولی عہد شہزادہ محمد بن سلمان  کے ملوث ہونے کے بارے میں پوچھے جانے والے ایک سوال کے جواب میں کہا تھاکہ میں نے اسے بچالیا ہے۔

0
شیئر کیجئے:
ہمیں فالو کریں
تازہ ترین