آل سعود امریکہ کے لیے ہمیشہ دودھ دینے والی گائے؛بائیڈن کا ایک تیر دو شکار

اس سے قطع نظر کہ ریاض اور واشنگٹن کے مابین کشیدگی امریکی حکومت کی جانب سے سعودی عرب اور محمد بن سلمان کے فرد کے خلاف حالیہ اقدامات کی روشنی میں حقیقی ہے یا نہیں لیکن  بائیڈن نےاس سے دو اہداف حاصل کیےہیں؛ اپنے انتخابی وعدے کو پورا کرنا اور مزید علاقائی اتحادیوں کی راہ ہموار کرنا۔

ولایت پورٹل:جو بائیڈن کی سربراہی میں نئی امریکی انتظامیہ کے حالیہ اقداماتبظاہر  کچھ میڈیا آؤٹ لیٹس کی صورت میں سعودی عرب کے خلاف اٹھائے گئے ہیں جو ریاض کے بارے میں واشنگٹن کی پالیسی کو تبدیل کرنے کے بائیڈن کے انتخابی وعدوں کو پورا کرتے ہیں خاص طور پر انسانی حقوق کے معاملات پر، فی الحال یمنی جنگی زون کا سب سے اہم مشترکہ امریکہ سعودی معاملہ ہے  جسے بائیڈن حکومت نے ختم کرنے کا وعدہ کیا ہے۔ اس مقصد کے لئے  واشنگٹن نے اعلان کیا ہے کہ وہ سعودی عرب اور متحدہ عرب امارات کو اسلحہ کی فروخت معطل کردے گا۔
کچھ لوگوں کے مطابق موجودہ امریکی انتظامیہ کا خیال ہے کہ یمنی جنگ کے لئے واشنگٹن کی حمایت کی وجہ سے یمنی شہریوں کے خلاف سعودی جرائم کے ساتھ ساتھ امریکہ کا نام بھی آرہا ہے، اس طرح  بائیڈن عالمی سطح پر امریکہ کی کھوئی ہوئی ساکھ کو دوبارہ حاصل کرنے کی کوشش کر رہے ہیں  جبکہ ڈیموکریٹس نے یہ نتیجہ اخذ کیا ہے کہ اس جنگ میں عرب یمن مخالف اتحاد کی کامیابی کا کوئی امکان نہیں ہے لیکن چونکہ سعودی عرب کو اسلحہ کی برآمدگی امریکی آمدنی کا ایک سب سے اہم ذریعہ ہے  لہذا ریاض کو ان ہتھیاروں کی فروخت روکنے کا منظر نامہ ممکن نہیں ہے،ماہرین کا خیال ہے کہ واشنگٹن ریاض کو برآمد  کیے جانے والے ہتھیاروں کی نوعیت کو بدل سکتا ہے اور کسی حد تک جارحانہ ہتھیاروں کی فروخت کو کم کرسکتا ہے۔
واشنگٹن کی جانب سے سعودی عرب کو ایسے سافٹ ویر پروگرام فروخت کرنے کا بھی امکان ہے جو منافع بخش ہونے کے ساتھ ساتھ منفی چہرہ بھی  نہیں رکھتے لیکن شروع سے ہی بائیڈن کے تیر کی نوک سعودی پالیسی سے زیادہ سعودی ولی عہد شہزادہ محمد بن سلمان کی طرف ہے اسی مناسبت سے نوجوان سعودی شہزادے نے  اسی وقت جب ریاستہائے متحدہ میں بائیڈن انتظامیہ برسر اقتدار آئی  سعودی عدالتی نظام میں کچھ فوری اصلاحات کیں اور متعدد قیدیوں کی رہائی کی  جن میں سب سے نمایاں سعودی خاتون  سماجی کارکن لجین ہذلول تھیں ۔
جس کا مقصد سعودی عرب کے بارے میں امریکی پالیسی کسی حد تک لچک لانا تھی ۔ لیکن ایسا لگتا ہے کہ  وہ بائیڈن کی نظر کو جذب نہیں کرسکے۔
یادرہے کہ  حال ہی میں بائیڈن کے دفتر کے ترجمان جین بڈنی نے واضح کیا کہ امریکی صدر سعودی عرب کے ساتھ اپنے ملک کے تعلقات کو ایک نئی سمت لے جانے کا ارادہ رکھتے ہیں اور صرف مواصلاتی چینلز کے ذریعے اس ملک کے بادشاہ سلمان بن عبد العزیز کے ساتھ پیروی کرنے کے خواہاں ہیں ،ان کا کہنا ہے کہ  اس ملک کے ولی عہد شہزادہ  محمد بن سلمان کی ہماری نظر میں کوئی جگہ نہیں ہے۔
واضح رہے کہ  ڈونلڈ ٹرمپ کی چار سالہ صدارت کے دوران  واشنگٹن اور ریاض کے تعلقات اکثر ٹرمپ اور محمد بن سلمان کے درمیان ذاتی تعلقات پر مبنی تھے، دوسری طرف ، جمال خاشقجی کا معاملہ سعودی عرب کی ایگزیکٹو برانچ کے سربراہ  محمد بن سلمان کے لئے ٹائم بم کی طرح ہے ، ایسا لگتا ہے کہ امریکی ڈیموکریٹس یہ بات اچھی طرح سمجھتے ہیں  اور پہلے مرحلے میں وہ دھمکی دیتے ہیں جرائم کی رپورٹ کا انکشاف کریں گے۔
قابل ذکر ہے کہ  خاشقجی کا قتل نوجوان سعودی شہزادے پر دباؤ ڈالنے کے لئے ٹرمپ کا سب سے بڑا کارڈ سمجھا جاتا ہے لیکن ان اشاروں کی جانچ دو طریقوں سے کی جاسکتی ہے؛پہلے یہ کہ بائیڈن اپنے وعدوں کو پورا کرنے کی کوشش کر رہے ہیں  اور ان کے دعوے کے مطابق انسانی حقوق کے مسائل حل کرنے کی کوشش کر رہے ہیں۔ دوسرےیہ کہ سعودی عرب خطے میں امریکی اتحاد میں سب سے آگے ہے اور صیہونی حکومت کے ساتھ عربی معاہدے میں خاص طور پر اپنا نمایاں کردار دیتے ہوئے واشنگٹن ریاض مخالف تناؤ پیدا کرنے کا ارادہ نہیں رکھتا ہےلہذا اگر خاشقجی کی رپورٹ کو بے نقاب کرنے کا منظر نامہ منظر عام پر آجاتا ہے  تو اس کا مطلب یہ ہوگا کہ خاشقجی کے قتل کی اطلاعات کے انکشاف کو روکنے کے لئے سعودی عرب اپنے خزانہ  کے منھ کو جو بائیڈن کے سامنے کھولنے کے لئے تیار ہے، اس صورتحال میں ، سعودی عرب کا نوجوان ولی عہد ، جس نے بادشاہی کے تخت تک پہنچنے کے لیے اپنے رشتہ داروں کو دبانے میں بھی دریغ نہیں کیا وہ صرف اپنے والد کے جانشین ہونے کا خواب چھوڑنے کے لئے تیار نہیں ہے۔
 اس کے علاوہ  امریکہ سے جدید ہتھیاروں کی فراہمی سعودیوں کی سب سے بڑی فوجی حمایت ہے  اور اسلحہ کے سودوں کی مسلسل معطلی سعودی سلامتی کے لئے ایک بڑا خطرہ ہے  جس سے واشنگٹن اور اس کے لئے سعودی عرب کے تاوان کے ایک نئے مرحلے کا آغاز ہوتا ہے۔ امریکہ کے لئے سعودی خزانے کو دوبارہ کھولنا۔



0
شیئر کیجئے:
ہمیں فالو کریں
تازہ ترین