لبنان کے ملکی مسائل میں آل سعود کی مداخلت

لبنانی وزیر اعظم کے انتخاب کے لیے ہونے والی مشاورت میں سعودی سفیر کی مداخلت کو لبنانی عوام نے اپنے ملک کی خودمختاری کی خلاف ورزی قرار دیا ہے۔

ولایت پورٹل:اس وقت جب کہ لبنان کی عبوری حکومت کے وزیر اعظم کو اگلے وزیر اعظم کے طور پر نامزد کیے جانے کا ایک بہتر موقع ہے، لیکن مشاورت میں سعودی سفیر کی مداخلت کو لبنانی عوام نے اپنے کی خودمختاری کی خلاف ورزی سمجھنے پر مجبور کیا۔
واضح رہے کہ لبنان کے صدر میشل عون نے  نئی حکومت کی تشکیل کے لیے لازمی پارلیمانی مشاورت کا آغاز کیا، اس دوران وزیر اعظم کے عہدے کے لیے کئی نام تجویز کیے گئے ، تاہم اس عہدہ کے لیے جیسے جیسے نگراں وزیر اعظم نجیب میقاتی کے امکانات بڑھتے گئے، سعودی سفیر ولید البخاری نے مداخلت کی اور متعدد سعودی حامی نمائندوں کو طلب کر کے انہیں مشاورت کے بارے میں ریاض کے موقف سے آگاہ کیا، تاہم لبنانیوں نے اس اقدام کو سفارتی روایت کے منافی سمجھا۔
رپورٹ کے مطابق لبنانی وزیراعظم کی نامزدگی پر پارلیمانی مشاورت کے آغاز کے ساتھ، لبنان ایک شدید لڑائی کا منظر پیش کر سکتا ہے،خاص طور پر حالیہ دنوں میں لبنان کے بعض گروہوں اور شخصیات کے نام نام متعارف کرائے اور اس طرح ان کے نام نجیب میقاتی کے مقابلے میں آئے جبکہ اس سے پہلے میقاتی کی تقرری تقریباً حتمی تھی۔

0
شیئر کیجئے:
ہمیں فالو کریں
تازہ ترین