آل سعود کا امریکہ کے تعاون سے میزائل بنانے کے لیے پہلا قدم

سعودی ذرائع کا کہنا ہے کہ سعودی عرب نے ایک امریکی کمپنی کے ساتھ میزائل ٹکنالوجی اور ایرو اسپیس کے میدان میں ابتدائی مفاہمت پر دستخط کیے ہیں۔

ولایت پورٹل:سعودی اخبار عکاظ کی رپورٹ کے مطابق سعودی عرب نے میزائل بنانے کے لیے پہلا قدم اٹھایا ہے، رپورٹ کے مطابقایک سعودی کمپنی نے میزائل ٹکنالوجی اور ایرو اسپیس صنعتوں کے میدان میں ایک امریکی کمپنی کے ساتھ ابتدائی یادداشت پر دستخط کیے ہیں،واضح رہے کہ جس کمپنی کے ساتھ سعودیوں نے ابتدائی یادداشت پر دستخط کیے وہ میزائل پرزوں اور ایرو اسپیس صنعتوں کی تیاری کے لئے ٹکنالوجی کے شعبے میں  نیز پن بجلی اور متبادل توانائی ، تیل کی صنعت ، ٹینک پرزوں کی کارخانہ دار اور بکتر بند گاڑیاں اور کھیلوں کی گاڑیاں بنانے میں دنیا کی سب سے بڑی امریکی کمپنی ہے، اس یادداشت  پر سعودی بزنس کمپلیکس کے جنرل منیجر  عبدالرحمن التمبکتی نے اور امریکی کمپنی ایڈوانس سی این جی ٹیکنالوجیز ، کارپوریشن کے نمائندے وینر کے نے دستخط کیے ہیں۔
التمبکتی نے اس یادداشت کو اسٹریٹجک قرار دیتے ہوئے کہاکہ توقع ہے کہ یہ منصوبہ اگلے سال 2021 میں ریاض میں شروع کیا جائے گا،تاہم فیکٹری کو جدہ منتقل کیے جانے کا بھی امکان ہے،انھوں نے مزید کہا کہ اس یادداشت پر دستخط کرنے کا مقصد مذکورہ امریکی کمپنی کی مہارت ، ٹکنالوجی اور تجربات کو سعودی عرب منتقل کرنا ، انہیں مقامی بنانا اور سعودی نوجوانوں کو اس شعبے میں تعلیم دینا ہے۔


0
شیئر کیجئے:
ہمیں فالو کریں
تازہ ترین