آل سعود کے ہاتھوں بے گناہ شہریوں کے وحشیانہ قتل عام کے خلاف وسیع پیمانے پر احتجاجی کمپین

آل سعود کی طرف سے آٹھ معصوم بچوں سمیت درجنوں شہریوں کو پھانسی دینے کے فیصلے سے سعودی عرب کی عوام میں غم و غصہ پایا جاتا ہے۔

ولایت پورٹل:سوشل میڈیا اور انسانی حقوق کی تنظیموں کے کارکنوں نے#stop_killing ہیش ٹیگ شروع کرکے سعودی عرب میں بے دفاع شہریوں کو پھانسی دینے جیسے آل سعود کے جرائم پر ردعمل کا اظہار کیا ہے۔
واضح رہے کہ یورپی سعودی ہیومن رائٹس آرگنائزیشن نے بھی اعلان کیا ہے کہ وہ  ہفتے کے روز سعودی عرب میں شہریوں کو پھانسی دینے کے خلاف احتجاجی مہم کا اہتمام کرے گی، اس رپورٹ کے مطابق آٹھ بچوں سمیت کم از کم 55 سعودی شہری پھانسی کے خطرے کی زد میں ہیں۔
یاد رہے کہ آل سعود کے مخالفین کے مطابق اس حکومت کی عدالت نے علی الصفوانی نامی شہری کو اپنے بھائی فاضل الصفوانی اور جواد القریریصر جنہیں زندہ یا مردہ حکومت تلاش کر رہی ہے، کو پناہ دینے کی وجہ سے سزائے موت سنائی ہے۔ واضح رہے کہ سعودی شہریوں کے خلاف آل سعود کے جرائم امریکی گرین لائٹ اور انسانی حقوق کے دفاع کے دیگر جھوٹے دعوؤں کی حمایت سے جاری ہیں بلکہ اس سے بڑھ کر انہوں نے سعودی حکومت کو کھلی چھوٹ دے رکھی ہے کہ وہ اپنے مخالفین کو جس طرح دل چاہے کچل دے کوئی اسے پوچھنے والا نہیں۔

0
شیئر کیجئے:
ہمیں فالو کریں
تازہ ترین