عراقی وزیر اعظم اور امریکی صدر کا مشترکہ بیان

عراقی وزیر اعظم اور ریاستہائے متحدہ کے صدر نے ، دونوں ممالک کے مابین اسٹریٹجک شراکت داری کے بارے میں ایک مشترکہ بیان میں اس بات پر زور دیا کہ یہ شراکت داری دونوں فریقوں کی خواہش پر مبنی ہے۔

ولایت پورٹل:عراقی سرکاری نیوز ایجنسی واع کی رپورٹ کے مطابق امریکی صدر ڈونلڈ ٹرمپ اور عراقی وزیر اعظم مصطفی الکاظمی نے بغداد اور واشنگٹن کے مابین اسٹریٹجک شراکت داری کے بارے میں مشترکہ بیان جاری کیا ہے، بیان میں کہا گیا ہے کہ عراق اور امریکہ کے درمیان اسٹریٹجک شراکت داری سلامتی اور خوشحالی کی مشترکہ خواہش پر مبنی ہے، بیان میں مزید کہا گیا ہے کہ عراقی حکام نے عراق میں داعش عناصر کا مقابلہ کرنے میں ایران کے تعاون کو تسلیم کیا اور کہا ہے کہ عراق ،ایران اور امریکہ کی زیرقیادت داعش  کےخلاف بین الاقوامی اتحاد  کی مدد سے داعش اور اس کی خلافت کو ختم کرنے میں کامیاب ہوا ہے ہم اس بات کو یقینی بنانے کے لئے کہ داعش اب عراق یا کسی دوسرے ملک کے لئے خطرہ نہیں ہے، یہ  ہم آہنگی جاری رکھیں گے ۔
بیان میں کہا گیا ہے کہ ہم عراقی فوج کی صلاحیت کو بڑھانے اور ہمارے مشترکہ مفادات کو خطرہ بنانے والے کسی بھی اقدام کا مقابلہ کرنے کے لئے دوطرفہ سلامتی کوآرڈینیشن کے طویل مدتی عہد کی توثیق کرتے ہیں، ہمارا سلامتی تعاون معاشی ، انسانی ، سیاسی اور ثقافتی شعبوں میں باہمی تعاون کی ترقی کی بنیاد ہے ، بیان میں کورونا وائرس کے خلاف جنگ میں فریقین کے تعاون اور اس سلسلے میں مشترکہ کارروائی کا حوالہ دیا گیا ہے۔
قبل ازیں عراقی وزیر اعظم کے دفتر نے ایک بیان میں کہا تھا کہ الکاظمی منگل (18 اگست) کو بغداد سے امریکہ روانہ ہوئے تھے، اس سفر کے دوران بغداد اور واشنگٹن کے درمیان جاری اسٹریٹجک مذاکرات کا دوسرا دور ہوا ۔





0
شیئر کیجئے:
ہمیں فالو کریں
تازہ ترین