آل سعود اور امریکہ کے درمیان چوہے بلی کا کھیل(ایک تجزیہ)

مغرب میں ایندھن کے بحران اور امریکی کانگریس کے وسط مدتی انتخابات کے انعقاد کے دوران OPEC+ کی جانب سے تیل کی پیداوار کو کم کرنے کے فیصلے کے  بعد ماہرین نے اس بات پر تبادلہ خیال کیا کہ سعودی عرب نے OPEC+ کے ایک اصلی رکن کے طور پر ایسا فیصلہ کیوں کیا۔

ولایت پورٹل:امریکی اخبار انٹرسیپٹ نے ایک رپورٹ میں تیل کی پیداوار کو کم کرنے کے اوپیک پلس کے فیصلے کے ذریعے کانگریس کے وسط مدتی انتخابات میں سعودی عرب کی مداخلت کے امکان کا ذکر کیا ہے، رپورٹ میں آرگنائزیشن فار ڈیموکریسی ان دی عرب ورلڈ کی ایگزیکٹو ڈائریکٹر سارہ لی وٹسن کا حوالہ دیتے ہوئے کہا گیا ہے کہ سعودی ولی عہد وسط مدتی انتخابات پر اثر انداز ہونے کے لیے تیل کا استعمال کر رہے ہیں تاکہ ان کے اتحادی ریپبلکن زیادہ سے زیادہ سیٹیں جیت سکیں۔
 انہوں نے مزید کہا کہ سعودی ولی عہد ہمیں یہ دکھانے کی کوشش کر رہے ہیں کہ وہ ہر چیز کو کنٹرول کرتے ہیں، یہاں تک کہ ہماری جمہوریت کو بھی، انٹرسیپٹ نے مزید لکھا کہ امریکہ نے سعودی عرب کی مدد کرکے اور تیل پیدا کرنے والے دو اہم ممالک ایران اور وینزویلا پر پابندی لگا کر تیل کی منڈی میں اس ملک کی طاقت میں اضافہ کیا، تاہم بائیڈن کو اس وقت موجودہ بحران سے فائدہ اٹھانا چاہیے اور ریاض پر امریکہ کا انحصار کم کرنا چاہیے نیز ایران اور وینزویلا پر عائد پابندیوں کا ایک بار پھر جائزہ لینا چاہیے۔
واضح رہے کہ رواں ماہ کے وسط میں شائع ہونے والے ایک بیان میں، سعودی عرب کی وزارت خارجہ نے انکشاف کیا کہ تیل کی پیداوار میں کمی کے OPEC+ کے فیصلے سے پہلے، امریکہ نے ریاض سے کہا تھا کہ وہ اس فیصلے کو ایک ماہ کے لیے ملتوی کر دے جس سے ظاہر ہوتا ہے کہ بائیڈن نے امریکی کانگریس کے وسط مدتی انتخابات پر تیل کی پیداوار میں کمی کے اثرات کو روکنے کی کوشش کی  کہ OPEC+ کے اراکین انتخابات کے بعد یہ فیصلہ کریں تاکہ ڈیموکریٹک پارٹی کے امیدوار  تیل کی قیمتوں میں اضافے سے متاثر نہ ہوں۔
 بین الاقوامی تعلقات اور امریکی مسائل کے ماہر خالد الترعانی نے عرب 21 ویب سائٹ کو بتایا کہ اوپیک + کی طرف سے تیل کی پیداوار میں کمی دراصل ریپبلکن پارٹی میں ٹرمپ کے ساتھ منسلک دھڑے کی مدد سے انتخابات میں واضح مداخلت ہے۔

0
شیئر کیجئے:
ہمیں فالو کریں
تازہ ترین