Code : 537 18 Hit

یمن میں 80 ہزار بچے بھوک سے اپنی جانیں گنوا بیٹھے ہیں:اقوام متحدہ کی جنرل اسمبلی کی صدر

اقوام متحدہ کی جنرل اسمبلی کی صدر نے کہا کہ یمن میں 80 ہزار بچے بھوک کے باعث جاں بحق ہو چکے ہیں۔

ولایت پورٹل:اقوام متحدہ کی جنرل اسمبلی کی صدر نے کہا کہ یمن میں 80 ہزار بچے بھوک کے باعث جاں بحق ہو چکے ہیں اور یمن کا مسئلہ بہت دشوار ہے تاہم ہمیں یمن میں کچھ بہتری نظر آ رہی ہے اور اس مسئلے ہر فریقین کو مذاکرات کے ذریعے متفق کرنے کی ضرورت ہے،اقوام متحدہ جنرل اسمبلی کی صدر ماریہ فرنینڈا نے تقریب سے خطاب کرتے ہوئے کہا ہے کہ اقوام متحدہ دنیا بھر میں انسانی حقوق سمیت مختلف موضوعات پر کام کر رہا ہے،انہوں نے کہا کہ ساؤتھ ایشیاء 2017 میں ماحولیاتی تبدیلیوں سے زیادہ متاثر ہوا جب کہ آکسفام کی رپورٹ کے مطابق %26 آبادی غربت کی لائن سے نیچے زندگی گزار رہے ہیں اور پاکستانی حکومت کی جانب سے دو کروڑ نوکریوں کا اعلان مثبت اقدام ہے،ماریہ فرنینڈا نے کہا کہ ہمیں علم ہے بہت سی وجوہات دنیا میں امن کے لیے خطرے کی علامت ہیں جب کہ دہشت گردی سمیت تمام چیلنجز سے نمٹنا  کسی اکیلے ملک کے بس کی بات نہیں ہےاور دنیا بھر کے اداروں کو مل کرمسائل کا حل نکالنا ہو گا،ماریہ فرنینڈا نے کہا ہے کہ تمام مسائل کا حل مذاکرات کے ذریعے ہی ممکن ہے اورچینلجز کا مقابلہ کرنا کسی ایک ملک کے بس کی بات نہیں ہے،اقوام متحدہ جادو سے مسئلہ کا حل نہیں نکال سکتی۔
تسنیم


0
شیئر کیجئے:
फॉलो अस
नवीनतम