Code : 1146 30 Hit

شعبان المعظم کے این اعمال سے غفلت نہ کیجئے!

رہبر انقلاب اسلامی حضرت آیت اللہ العظمٰی خامنہ ای(مد ظلہ) کی تعبیر کے مطابق دعائے کمیل اور مناجات شعبانیہ سے انس انسان کو نرم دل بناتا ہے۔ دعائے کمیل کی اصل یہ ہے کہ یہ نیمہ شعبان سے مخصوص ہے اور مناجات شعبانیہ کہ جو آئمہ معصومین(ع) سے نقل ہوئی ہے وہ بھی ماہ شعبان المعظم سے ہی مخصوص ہے اور ان دونوں دعاؤں کا لحن اور انداز بھی ایک دوسرے سے بہت نزدیک ہے اور یہ دونوں دعائیں عاشق کی اپنے معشوق کے حضور میں تضرع کا اکمل نمونہ ہے۔

ولایت پورٹل: قارئین کرام! ہم ماہ شعبان المعظم کے ابتدائی ایام میں ہیں یہ بڑی خوشیوں کا مہینہ ہے چونکہ اس کی ابتداء ہی میں تیسری شعبان کو امام حسین(ع) کا یوم ولادت ہے پھر حضرت عباس(ع) و امام سجاد اور پھر اس 15 شعبان کو منجی عالم بشریت حضرت مہدی موعود(عج) کا یوم ولادت ہے۔ اور جیسے جیسے اس مہینہ کا اختتام ہوتا ہے ماہ مبارک رمضان آجاتا ہے۔
بعض روایت کی روشنی ایک سال ماہ شعبان المعظم کی آمد پر رسول خدا(ص) نے ایک خطبہ ارشاد فرمایا اور اس مہینہ کی عظمت کو اس طرح بیان کیا:’’شعبان معظم شریف مہینہ ہے اور یہ میرا مہینہ ہے حاملان عرش کی نظروں میں یہ باعظمت ہےاور یہ ایسا مہینہ ہے کہ رمضان المبارک کی طرح جس میں بندگان الہی کا رزق زیادہ ہوجاتا ہے اور اس مہنہ کو شعبان کہنے کی وجہ یہ ہے اس میں مؤمنین کا رزق تقسیم ہوتا ہے اور یہ ایسا مہینہ ہے جس میں عمل کا ثواب کئی گنا بڑھ جاتا ہے اور ایک نیک کام کی جزا ستر برابر ملتی ہے‘‘۔
لہذا اس خطبہ میں رسول اللہ(ص) کی تمام تر تأکیدات ماہ شعبان المعظم کی شرافت و کرامت کو ظاہر کرتی ہے اور ہمارے لئے یہ موقع فراہم کرتی ہے کہ ماہ رمضان المبارک آنے سے پہلے پہلے ہم اپنے کو ضیافت الہی کے لئے آمادہ کرلیں۔
ماہ شعبان کے مختصر اعمال
محمد و آل محمد(ص) پر کثرت سے صلوات بھیجنا
بزرگان اور علماء نے اس مہینہ کے لئے کچھ خاص آداب و اعمال کا ذکر کیا ہے جن میں محمد و آل محمد (ص) پر زیادہ سے زیادہ درود و صلوات و سلام پڑھنا بھی اس مہینہ کے مخصوص اعمال میں سے ہے تاکہ اس مہینہ کے صاحب سے توسل کرکے ہم اس کی برکتوں سے محظوظ ہوسکتے ہیں۔
استغفار شعبان کا سب سے اہم عمل
توبہ کی قبولیت کے سلسلہ میں زمان و مکان کی تأثیر کو کبھی نظر انداز نہیں کرنا چاہیئے چنانچہ شعبان المعظم کا مہینہ توبہ کی قبولیت کا بہترین زمانہ ہے۔چنانچہ امام علی رضا(ع) سے منقول روایت کی روشنی میں ماہ شعبان کی سب سے بڑی دعا اس میں اللہ تعالٰی سے استغفار طلب کرنا ہے لہذا جو شخص اس مہینہ میں ہر دن ستر مرتبہ استغفار کرے گویا اس نے عام دنوں میں ستر ہزار مرتبہ استغفار کیا ہے۔
اور اس مہینہ میں استغفار کے لئے جو خاص ذکر بیان ہوا ہے وہ یہ ہے:’’ أستغفر الله و أسأله التوبة‘‘ اور ’’ استغفرالله الَّذی لا اِلهَ اِلاَّ هُوَ الرَّحْمنُ الرَّحیمُ، اَلْحَیُّ الْقَیُّومُ، وَاَتُوبُ اِلَیْهِ‘‘۔
اس مہینہ کے مؤکد روزے
اس مہینہ کے اعمال میں سے ایک اہم عمل جس کی احادیث میں بہت تأکید ملتی ہے وہ اس کے کچھ مخصوص دنوں میں روزہ رکھنا ہے اور وہ ہے پہلی ،تیسری تاریخ اور پیر و جمعرات اور اور آخر مہینہ کی 3 تاریخیں اور امام رضا علیہ السلام کی حدیث کی روشنی میں اس مہینہ کے ایک روزہ کا ثواب بہشت کا واجب ہوجانا ہے۔
اس مہینہ میں صدقہ جہنم سے نجات کا ضامن
صدقہ دینا اور ضرورتمندوں کی مدد کرنا بھی اس مہینہ میں خاص اہمیت کے حامل امور میں سے ہے اس طرح کہ اگر اس مہینہ میں صدقہ دیا جائے چاہے وہ مقدار میں آدھی کھجور بھی ہو تو اللہ تعالٰی اس کے جسم کو جہنم کی آگ سے نجات دیدیتا ہے۔
ہر جمعرات کی مخصوص نماز
ماہ شعبان میں ہر جمعرات کو دو رکعت نماز کی تأکید ہوئی ہے چنانچہ اس نماز کے پڑھنے کا طریقہ یہ ہے کہ ہر رکعت میں سورہ حمد کے بعد 100 مرتبہ سورہ توحید(قل ھو اللہ) پڑھی جائے اور سلام کے بعد 100 مرتبہ صلوات پڑھے تو اللہ تعالٰی دنیا و آخرت کی ہر حاجت پوری کردیتا ہے۔
ماہ شعبان سے مخصوص 2 دعائیں
رہبر انقلاب اسلامی حضرت آیت اللہ العظمٰی خامنہ ای(مد ظلہ) کی تعبیر کے مطابق دعائے کمیل اور مناجات شعبانیہ سے انس انسان کو نرم دل بناتا ہے۔ دعائے کمیل کی اصل یہ ہے کہ یہ نیمہ شعبان سے مخصوص ہے اور مناجات شعبانیہ کہ جو آئمہ معصومین(ع) سے نقل ہوئی ہے وہ بھی ماہ شعبان المعظم سے  ہی مخصوص ہے اور ان دونوں دعاؤں کا لحن اور انداز بھی ایک دوسرے سے بہت نزدیک ہے اور یہ دونوں دعائیں عاشق کی اپنے معشوق کے حضور میں تضرع کا اکمل نمونہ ہے۔
شب برأت کا احیاء
پورے سال کی با فضیلت راتوں میں سے ایک 15 شعبان اور ایک تعبیر کے مطابق شب برأت ہے یہ ایسی رات ہے جس میں پروردگار کا فضل بندوں پر عام ہوتا ہے یہ ایسی رات ہے کہ جس میں اللہ تعالٰی اپنے بندوں کو بغیر حاجت دئے نہیں لوٹاتا چنانچہ اس رات کا احیاء کرنا مستحب مؤکد ہے جس سے مردہ دل زندہ ہوجاتے ہیں اور اس رات کے مخصوص اعمال میں رات بھر جاگ کر استغفار،نماز مناجات اور فرج امام زمان(عج) کے دعا اور دن میں روزہ رکھنے کی بہت تاکید ہوئی ہے۔
اور اس رات بزرگان دین اور علماء سے نقل ہوئی ہے کہ اس شب اور خود 15 شعبان کے دن جتنا ہوسکے قرآن مجید کی تلاوت کرکے سرکار ولی عصر(عج) کی خدمت ہدیہ کرنا چاہیئے۔



0
شیئر کیجئے:
फॉलो अस
नवीनतम