Code : 1023 6 Hit

امریکہ کی جانب سے جولان پر صیہونی حکومت کی حکمرانی کو تسلیم کرنا عالم اسلام کی توہین ہے:سید حسن نصراللہ

سید حسن نصراللہ نے امریکی صدر ٹرمپ کی جانب سےجولان پر اسرائیل کی حکمرانی کو باضابطہ طور پر تسلیم کئے جانے کے بیان پر سخت رد عمل کا اظہار کرتے ہوئے اسے اسلامی اور عرب ملکوں کی توہین قرار دیا ہے۔

ولایت پورٹل:حزب‌الله کے سیکریٹری جنرل سید حسن نصرالله نےکل امریکی صدر ٹرمپ کی جانب سے مقبوضہ جولان کے حوالے سے  متعصبانہ بیان پر کہا کہ امریکہ کا یہ اقدام مغربی ایشیاء میں امن کے عمل کوسبوتاژ کرنے کی سازش ہے،سید حسن نصرالله  نے کہا کہ عرب ممالک کے سربراہوں کوچاہیے کہ وہ تیونس کے اجلاس میں عرب مفاہمتی عمل کے فارمولے پرنظرثانی کریں،حزب‌الله کے سیکریٹری جنرل کا کہنا تھا کہ امریکی وزیر خارجہ مائیک پمپئو نے اپنے دورہ لبنان میں لبنان کی حقیقت پر مبنی سچ بات کہنے سے گریز کیا اور ایران اور حزب‌الله کے خلاف جھوٹے دعوے کئے،سید حسن نصرالله نے اس بات پر تاکید کرتے ہوئے کہ حزب‌الله 34 سال سے لبنان کا دفاع کررہی ہےکہا کہ امریکہ اسرائیل کی قبضہ گری کی پالیسی کو تسلیم کر کے لبنانی عوام کو خطرات سے دوچارکررہا ہے،واضح رہے کہ امریکی صدر ٹرمپ نے پیر کے روز واشنگٹن میں غاصب صیہونی حکومت کے وزیر اعظم بنیامین نتن یاہو کے ساتھ ایک مشترکہ پریس کانفرنس میں اعلان کیا تھا کہ امریکہ جولان پر اسرائیل کی حکمرانی کو باضابطہ طور پر تسلیم کرتا ہے،ٹرمپ کے اس غیر قانونی اور فتنہ انگیز اقدام کے بعد دنیا کے مختلف ملکوں منجملہ اسلامی جمہوریہ ایران، فلسطین، عراق، اردن، کویت، لبنان، اور دنیا کی اہم ترین شخصیات اور بین الاقوامی تنظمیوں نیز اداروں نے ٹرمپ کے اس اقدام کی شدید مذمت کی اور اسے عالمی قوانین اور اقوام متحدہ کے منشور کے منافی قرار دیا،مقبوضہ جولان کی پہاڑیاں شام کے صوبے قنیطرہ کا حصہ ہیں جن پر غاصب صیہونی حکومت نے 1968 کی6 روزہ جنگ میں قبضہ کر لیا تھا اور 1982 میں شام کے اس مقبوضہ علاقے کو اسرائیل میں شامل کرنے کا اعلان کیا تھا،1981 میں اقوام متحدہ کی سلامتی کونسل کے بیشتر اراکین کی جانب سے منظور کی جانے والی قرارداد 497 میں کہ جس کی امریکہ نے بھی حمایت کی، جولان کے سلسلے میں صیہونی حکومت کے فیصلے اور اس بارے میں اقدامات کو مسترد کرتے ہوئے کہا گیا ہے کہ مقبوضہ علاقوں میں جولان کے علاقے کو شامل کیا جانا غلط اقدام ہے۔
سحر


0
شیئر کیجئے:
फॉलो अस
नवीनतम