Code : 752 11 Hit

افغان جنگ کی ایک دہائی کے دوران2018ء سب سے خونریز سال :اقوام متحدہ

اقوام متحدہ کا کہنا ہے کہ افغان جنگ کی ایک دہائی کے دوران سال 2018 معصوم شہریوں کی ہلاکتوں میں سب سے خونریز سال تھا۔

ولایت پورٹل:رائٹرز نیوز ایجنسی کی رپورٹ کے مطابق افغان جنگ کی ایک دہائی کے دوران سال 2018 معصوم شہریوں کی ہلاکتوں میں سب سے خونریز سال تھا،اقوام متحدہ کی جانب سے جاری ہونے والی ایک رپورٹ میں انکشاف کیا گیا ہے کہ جنگ زدہ افغانستان میں گزشتہ ایک دہائی کے دوران شہريوں کے زخمی يا ہلاک ہونے کے سب سے زيادہ واقعات گزشتہ برس 2018 میں پیش آئے، اقوام متحدہ کی رپورٹ میں درج اعداد و شمار کے تحت 2018 میں 3 ہزار 8 سو 4 شہری ہلاک ہوئے جب کہ دھماکوں اور پُر تشدد واقعات میں 7 ہزار 189 افراد زخمی ہوئے یعنی مجموعی طور پر 10 ہزار 933 شہری ہلاک و زخمی ہوئے جن میں خواتین اور بچے بھی شامل ہیں،رپورٹ میں انکشاف کیا گیا ہے کہ شہريوں کے ہلاک اور زخمی ہونے کے واقعات میں 63 فیصد شدت پسندوں کے حملوں میں پیش آئے، جن میں سے 37 فیصد حملے طالبان اور 20 فیصد حملوں میں داعش ملوث تھی جب کہ 6 فیصد حملے دیگر حکومت مخالف جتھوں نے کیے،اسی طرح زخمی يا ہلاک ہونے والے 24 فیصد شہری کابل حکومت، مغربی دفاعی اتحاد نيٹو و اس کے اتحاديوں کی جانب سے شدت پسندوں تنظیموں پر حملے میں نشانہ بنے جب کہ بقیہ شہری شدت پسندوں کے عوامی مقامات اور حکومتی و اتحادی فورسز پر حملے کے دوران ہلاک و زخمی ہوئے، رپورٹ میں مزید کہا گیا ہے کہ 2017 کے مقابلے ميں 2018 ميں معصوم شہریوں کے ہلاک و زخمی ہونے کے واقعات ميں 11 فیصد اضافہ دیکھا گیا ہے جب کہ گزشتہ 10 برسوں میں 32 ہزار شہری ہلاک اور 60 ہزار کے قريب زخمی ہوئے۔
مہر


0
شیئر کیجئے:
फॉलो अस
नवीनतम